بنگلہ دیش میں کشتی الٹنے سے متعدد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption تاحال اس مقام کا تعین نہیں ہو سکا ہے جہاں کشتی ڈوبی ہے

بنگلہ دیش کے دریائے میگھنا میں طوفانی ہواؤں کی وجہ سے کشتی الٹنے سے متعدد افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

ایم وی میراج 4 نامی کشتی ڈھاکہ سے شریعت پور جا رہی تھیکہ دارالحکومت ڈھاکہ کے قریب ضلع منشی گنج میں تیز ہواؤں کی وجہ سے الٹ گئی۔

ڈوبنے والی کشتی پر عورتوں اور بچوں سمیت 200 سے زیادہ افراد سوار تھے اور حکام نے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

ضلع منشی گنج کے ڈپٹی کمشنر سیف الحسن بادل نے خبر رساں ادارے روئٹرز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’ ہم امدادی ٹیموں کے ساتھ جائے حادثہ تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘

ڈپٹی کمشنر نے خبر رساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کشتی پر سوار افراد کی صحیح تعداد معلوم نہیں لیکن امکان ہے کہ اس پر 350 افراد سوار تھے۔

ڈھاکہ میں بی بی سی کی نامہ نگار شہناز پروین کا کہنا ہے کہ تاحال اس مقام کا تعین نہیں ہو سکا ہے جہاں کشتی ڈوبی ہے۔

مقامی پولیس چیف فردوس احمد نے اے ایف پی کو بتایا کہ ’کشتی مکمل طور پر پانی میں ڈوب چکی ہے۔ ہم اس تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘

اے ایف پی کے مطابق مسافروں میں سے کئی تیر کر کنارے تک پہنچنے میں کامیاب رہے جبکہ کئی لاشیں بھی پانی سے نکال لی گئی ہیں جس میں ایک بچے کی لاش بھی شامل ہے۔

بنگلہ دیش میں کشتی کے حادثے عام ہیں جن میں ہر سال بڑی تعداد میں لوگ ہلاک ہوتے ہیں۔ ایسے حادثوں کی وجہ اکثر کمزور کشتیوں میں زیادہ لوگوں کا سوار ہونا بتایا جاتا ہے۔

اسی بارے میں