’ہیپی ان تہران‘ پر گرفتاری اور تذلیل

تصویر کے کاپی رائٹ Youtube
Image caption یہ ویڈیو چند نوجوانوں کی جانب سے بظاہر فیرل ولیم کے گانے کو اپنے انداز میں پیش کرنے کی کوشش ہے

اگر خوشیاں پھیلانے پر آپ کو تھانے اور حوالات کی سیر کرنی پڑ جائے اور سرکاری ٹی وی پر آپ کی تذلیل کی جائے تو ایسی خوشی کا کیا فائدہ؟

ایران میں چند نوجوانوں کے گروپ کو پولیس نے پاپ گلوکار فیرل ولیمز کے گانے ’ہیپی‘ کی میوزک ویڈیو ’ہیپی ان تہران‘ بنانے پر گرفتار کیا ہے۔

یہ ویڈیو انٹرنیٹ پر آنے کے بعد وائرل ہو گئی، جس کے بعد ان نوجوانوں کو ملک کے سرکاری ٹی وی پر ہتھکڑیاں لگا کر پیش کر کے اعترافی بیانات دلوائے گئے کہ انھیں جھانسہ دیا گیا تھا اور اس پر ندامت کا اظہار کرنے پر مجبور کیا گیا۔

اس خبر کی اشاعت کے کچھ دیر بعد ایران سے آمدہ اطلاعات کے مطابق ان نوجوانوں کو ضمانت پر رہا کر دیا گیا ہے اور ان میں سے ایک لڑکی نے انسٹاگرام پر اپنی تصویر لگا کر تصدیق کی کہ انہیں رہا کر دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق فیرل ولیمز کے گانے ’ہیپی‘ کی ویڈیو 21 مارچ کو پوسٹ کی گئی اور چونکہ یہ گانا نوجوانوں میں بے حد مقبول ہے اس لیے اس کے ایک نہیں بلکہ دو ایرانی ورژن انٹرنیٹ پر ہیں جبکہ کئی اور ممالک میں بھی اس کے ورژن بنائے گئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس گروپ میں شامل ایک لڑکی نے اپنی یہ تصویر انسٹا گرام پر لگا کر رہائی کی خبر دی

’ہیپی ان تہران‘ کو ہٹائے جانے اور گرفتاری سے قبل 165000 بار دیکھا جا چکا تھا تاہم ان نوجوانوں کی سرکاری ٹی وی پر سرعام بے عزتی پر جسے ان کی ’عزت کے تحفظ‘ کا نام دیا گیا ہے، سوشل میڈیا پر عالمی سطح پر شدید تنقید کی جا رہی ہے۔

ایران کے سرکاری ٹی وی پر ایک پولیس افسر بڑے فخر سے بتاتا ہے کہ اس نے بڑی محنت کر کے ان افراد کو شناخت کیا اور چند گھنٹوں میں گرفتار کیا حالانکہ یہ ویڈیو ایک مہینے سے زیادہ عرصے سے انٹرنیٹ پر موجود تھی۔

اس ویڈیو کے بعد میزبان ان سے سوال و جواب کرتا ہے اور ان نوجوانوں میں سے ایک بتاتا ہے کہ انھیں معلوم نہیں تھا کہ ان کی یہ ویڈیو نشر کی جائے گی۔

اس کے بعد یہی پولیس افسر نوجوانوں کو خبردار کرتا ہے کہ وہ اس طرح کی فلمیں بنانے والوں کے جھانسے میں نہ آئیں اور انھوں نے اس ویڈیو کو ’فحش‘قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایسی ویڈیو ’عوام الناس کی پاکیزگی کو زک پہنچاتی ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption فیرل ولیم نے ٹوئٹر پر ان گرفتاریوں پر اظہارِ افسوس کیا

ایران کے سرکاری ٹی وی پر اس ساری نشریات کا مقصد میزبان کے بقول ان نوجوانوں کی ’عزت کی حفاظت کرنا ہے۔‘

اس ویڈیو میں شامل نوجوانوں میں سے ایک نے اس قبل ایران وائر نامی ویب سائٹ کوبتایا تھا کہ انھوں نے ’اپنے بالوں کو وِگ کے ذریعے‘ ڈھانپا تاکہ وہ ’اسلامی شعائر‘ کی خلاف ورزی کی مرتکب نہ ہوں اور یہ کہ ’دنیا کو معلوم ہو کہ ایران ان کی سوچ کے برعکس ایک بہتر جگہ ہے۔‘

اس کے بعد ایرانیوں نے ہیش ٹیگ #freehappyiranians استعمال کر کے ہزاروں ٹویٹس شروع کر دیں جن میں کئی نے ایرانی صدر کو بھی ٹیگ کر کے مخاطب کیا۔

ایرانی صحافی گلناز اسفند یاری نے ٹویٹ کی کہ ’ایران وہ ملک ہے جہاں ’خوش ہونا‘ جرم ہے۔‘

شیما کلباسی نے ٹویٹ کی کہ ’اگر آپ تہران میں فیرل کے گانے پر رقص کریں گے تو آپ کو گرفتار کیا جا سکتا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption ایرانی صدر، وزیرِ خارجہ اور ایران کے روحانی پیشوا سبھی ٹوئٹر باقاعدگی سے استعمال کرتے ہیں اور اس پر اظہارِ خیال کرتے ہیں

یہاں تک کے گلوکار فیرل ولیم نے بھی اس پر ٹویٹ کر کے اظہارِ خیال کیا: ’یہ سخت افسوس کی بات ہے کہ ان بچوں کو خوشیاں پھیلانے کی کوشش پر گرفتار کر لیا گیا۔‘

یاد رہے کہ 17 مئی کو ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا تھا کہ ’سائبر سپیس کو ایک موقع سمجھا جانا چاہیے جہاں دو طرفہ رابطے کیے جاتے ہیں، کارکردگی بہتر ہوتی ہے اور روزگار کے موقع پیدا ہوتے ہیں۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’حکومت موجودہ صورتحال سے خوش نہیں ہے اور انٹرنیٹ کی رفتار کو گھروں، کاروبار اور موبائلز پر بہتر بنانے کے لیے کوشاں ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption بہت سے مبصرین اسے ان تصاویر کا ردِ عمل بھی قرار دے رہے ہیں جس میں کئی ایرانی خواتین نے اپنے حجاب کو ہٹا کر تصاویر سوشل میڈیا پر شیئر کیں

مبصرین ان نوجوانوں کے خلاف اس کارروائی کو صدر روحانی کے دور میں بڑھتی ہوئی آزادی کے خلاف ایک تنبیہ کے طور پر لے رہے ہیں تاکہ لوگوں کو خبردار کیا جا سکے کہ ان کے ساتھ بھی ایسا ہو سکتا ہے۔

بعض مبصرین اس کا تعلق انٹرنیٹ پر ان تصاویر سے جوڑ رہے ہیں جس میں گذشتہ دنوں خواتین نے حجاب کے بغیر تصاویر سوشل میڈیا پر شائع کی گئی تھیں۔

اسی بارے میں