اروند کیجریوال 14 دن کے لیے تہاڑ جیل میں

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption کیجریوال نے انتخابی مہم کے دوران متعدد سیاست دانوں کو انتہائی بدعنوان قرار دیا تھا

دہلی کی ایک عدالت نے عام آدمی پارٹی کے رہنما اور دہلی کے سابق وزیراعلیٰ اروند کیجریوال کو بھارتیہ جنتا پارٹی کے سابق صدر نتن گڈکری کے خلاف مبینہ طور پر ہتک آمیز بیان بازی کے معاملے میں 14 دن کے لیے عدالتی حراست میں بھیجنے کا حکم دیا ہے۔

کیجریوال اب چھ جون تک تہاڑ جیل میں رہیں گے۔

بی بی سی ہندی کے مطابق انھوں نے جمعے کو معاملے کی سماعت کے دوران ایک مرتبہ پھر پٹیالہ ہاؤس عدالت کی طرف سے مقرر کردہ 10 ہزار روپے کا ضمانتی مچلكہ بھر کر رہائی پانے سے ایک بار پھر انکار کر دیا۔

اس سے قبل بدھ کو بھی انھوں نے ضمانت پر رہائی سے انکار کیا تھا اور عدالت نے انہیں جمعہ تک کے لیے عدالتی حراست میں جیل بھیجا تھا۔

ہتک عزت کا یہ معاملہ عام انتخابات کی مہم کا ہے، جب کیجریوال نے ایک نیوز کانفرنس میں 13 لوگوں پر الزام تراشی کی تھی جن میں بی جے پی کے سابق صدر نتن گڈکری کا بھی نام شامل تھا۔

اس کے بعد گڈکری سمیت کئی دیگر رہنماؤں نے کیجریوال پر ہتک عزت کا مقدمہ کر دیا تھا۔

جمعے کو سماعت کے دوران جج نے کہا کہ کیجریوال کو سابق وزیراعلی ہونے کے ناطے قانونی طریقۂ کار پر عمل کرنا چاہیے۔

جج نے کیجریوال کے وکیل سے کہا کہ اگر وہ مطمئن نہیں ہیں، تو اعلیٰ عدالت میں جا سکتے ہیں لیکن اس وقت عدالت کے اپنے سابقہ حکم کو تبدیل کرنا ممکن نہیں۔

گڈکری کی وکیل پنکی آنند نے بی بی سی کو بتایا کہ عدالت نے ذاتی طور پر کیجریوال کو پورا قانونی طریقۂ کار سمجھایا لیکن اس کے باوجود انہوں نے ضمانت کے لیے مچلكہ بھرنے سے انکار کر دیا۔

اسی دوران عام آدمی پارٹی کے رہنما گوپال رائے نے کہا ہے جمعے کی شام کو پارٹی کے کارکنوں کےاجلاس میں مستقبل کی حکمت عملی طے کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ عدالت کے اس فیصلے کو اعلیٰ عدالت میں چیلنج کیا جائے گا۔

اسی بارے میں