جوتے بچ گئے لیکن ملازمت چلی گئی

تصویر کے کاپی رائٹ webo
Image caption چینی خبر رساں ادارے شنہوا کے مطابق، جيانگسي میں 16 جون کو ہونے والی زبردست بارش کی وجہ سے 18،500 سے زیادہ لوگوں کو بے گھر ہونا پڑا ہے

چین میں سیلاب سے متاثر ایک گاؤں کا دورہ کرنے والے ایک سرکاری افسر نے اپنے جوتوں کو بھیگنے سے بچانے کے لیے ایک مقامی شخص کی پیٹھ پر سواری کی جس کی وجہ سے انھیں برطرف کر دیا گیا ہے۔

چین کےجنوب مشرقی علاقے میں جون کے وسط میں آنے والے سیلاب سے ہزاروں افراد بے گھر ہو گئے ہیں۔

مشرقی صوبے جيانگشی کے لینٹين گاؤں میں ٹخنے بھر پانی کو پار کرانے کے لیے افسر کو اپنی پیٹھ پر لے جاتے ہوئے شخص کی تصویر انٹرنیٹ پر بڑے پیمانے پر شیئر کی گئی ہے۔

چائنا ریڈیو انٹرنیشنل کی خبروں کے مطابق، وانگ نام کا یہ اہلکار ایک دریا میں طغیانی کی وجہ سے غائب ہونے والے گاؤں کے بچوں کو تلاش کرنے کے لیے روانہ کیا گیا تھا۔

افسر کو پیٹھ پر لادنے والے شخص ڈینگ کے بارے میں کہا گیا ہے کہ وہ ایک کلرک ہیں اور انھوں نے وانگ کو کیچڑ والا راستہ پار کرانے کے لیے پیٹھ پر لے جانے کی تجویز پیش کی تھی۔

لیکن وانگ کو یہ پیشکش بہت مہنگی پڑی اور وہ نوکری سے ہاتھ دھو بیٹھے۔

سرکاری خبر رساں ایجنسی شنہوا کے مطابق مقامی انتظامیہ نے اس ’غیر مناسب رویے‘ کو منفی اثرات کا محرک قرار دیا اور ان کے خیال میں اس سے پارٹی کے حکام کی ساکھ خراب ہوئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption یہ تصویر سوشل میڈیا پر وسیع پیمانے پر شیئر کی گئی ہے

ایپك ٹائمز کے مطابق یہ پہلی بار نہیں ہے کہ اس طرح کی تصاویر پر لوگوں نے ناراضگی ظاہر کی ہے۔ گذشتہ سال شیجیانگ صوبے کا دورہ کرنے والے کمیونسٹ پارٹی کے نوجوان افسر کو ربڑ کے جوتے پہنے ہوئے ایک بوڑھے شخص کی پیٹھ پر لاد کر لے جاتے ہوئے تصویر لی گئی تھی۔

اس افسر کو مقامی حکومت کے تعمیرات کے دفتر کے ڈائریکٹر کے عہدے سے معطل کردیا گیا تھا۔

ایک بلاگر کے حوالے سے کہا گیا تھا: ’اگر آپ ہوا میں اڑنے کی جرات کریں گے تو شہری آپ کو زمین پر آنے پر مجبور کر دیں گے۔‘

شنہوا کے مطابق جيانگشی میں 16 جون کو ہونے والی بارش کی وجہ سے 18،500 سے زیادہ لوگوں کو بے گھر ہونا پڑا ہے۔

اسی بارے میں