’خواتین جہیز مخالف قانون کا غلط استعمال کرتی ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بھارت میں 1961 سے جہیز دینا غیر قانونی ہے تاہم یہ روایت اب بھی جاری ہے

بھارتی عدالتِ عظمیٰ نے کہا ہے کہ خواتین کی بڑھتی ہوئی تعداد ملک میں جہیز مخالف قوانین کا غلط استعمال کرتے ہوئے اپنے شوہروں اور سسرال والوں کو ہراساں کر رہی ہیں۔

عدالت کا کہنا ہے کہ یہ قانون خواتین کی مدد کے لیے بنایا گیا تھا تاہم ناراض بیویاں اس کو بطور ہتھیار استعمال کر رہی ہیں۔

عدالت نے اب پولیس کو حکم جاری کیا ہے کہ جہیز سے متعلق کسی بھی درخواست کے سلسلے میں کسی کو گرفتار کرنے سے پہلے نو نکات پر مشتمل ایک چیک لسٹ پوری کی جائے۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ بھارت میں ہر سال آٹھ ہزار خواتین کو قتل کیا جاتا ہے اور جہیز سے منسلک جرائم ایک سنگین مسئلہ ہیں۔

جنوبی ایشیا میں شادی کے موقعے پر جہیز دینا صدیوں پرانی روایت ہے۔

بھارت میں 1961 سے جہیز دینا غیر قانونی ہے لیکن اس کے باوجود یہ روایت اب بھی جاری ہے۔ اس مسئلے پر کام کرنے والے افراد کا کہنا ہے کہ اس سے خواتین مشکل حالات کا سامنا کرتی ہیں اور انھیں گھریلو تشدد یا موت کا بھی سامنا ہو سکتا ہے۔

اس حوالے سے خواتین کے تحفظ کے لیے بھارت میں 1983 میں ایک جہیز مخالف انتہائی سخت قانون دفعہ 498 اے متعارف کروایا گیا تھا۔

اس قانون کے تحت ملزم کو فوری طور پر گرفتار کیا جا سکتا ہے۔ تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ اب اکثر اس قانون کو غلط استعمال کیا جاتا ہے اور خواتین جھوٹے مقدمے درج کرواتی ہیں۔

بدھ کو عدالتِ عظمیٰ کے دو رکنی بینچ کے جسٹس سی کے پرساد اور پی سی غوض نے اپنے حکم میں کہا: ’دفعہ 498 اے قابلِ سماعت اور ناقابلِ ضمانت جرم ہے، جس کی وجہ سے یہ خاصا بدنام ہو کر رہ گیا ہے کیونکہ اسے ناراض بیویاں ڈھال کی بجائے بطور ہتھیار استعمال کرتی ہیں۔‘

حکم نامے میں مزید کہا گیا ہے کہ ’کسی شوہر یا اس کے خاندان والوں کو ہراساں کرنے کا سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ اس قانون کے تحت انھیں گرفتار کروا دیا جائے۔ بہت سے کیسوں میں شوہر کے ضعیف دادا اور دادی تک کو یا کئی سالوں سے ملک سے باہر موجود نندوں کو گرفتار کروایا گیا۔‘

عدالت کا کہنا تھا کہ نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کے اعداد و شمار کے مطابق 2012 میں اس قانون کے تحت 47951 خواتین سمیت دو لاکھ کے قریب افراد گرفتار ہوئے مگر ان میں سے صرف 15 فیصد کو سزا ہو سکی۔

اس قانون کے غلط استعمال کے بارے میں خدشات کا اظہار کرتے ہویے جج صاحبان نے پولیس کو حکم کیا ہے کہ وہ ملزم کو فوری گرفتار کرنے کے بجائے نو نکات کی ایک چیک لسٹ پوری کر لیں تاکہ انھیں خود یقین ہو کہ گرفتاری کی ضرورت ہے۔

عدالت نے کہا کہ اگر پولیس نے گرفتاری کر لی تو پھر میجسٹریٹ کو مزید حراست کی اجازت دینا ہوگی۔

اسی بارے میں