600 مزید ہندوستانیوں کا عراق سے واپسی کا امکان

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption صحافی عمران قریشی کے مطابق 46 میں سے صرف 14 نرسیں ہی واپسی چاہتی تھیں باقی سب دوسری جگہ کام چاہتی تھیں تاکہ اپنے قرض چکا سکیں

عراق کے شمالی علاقے میں محصور 46 بھارتی نرسوں کے بعد اب عراق سے تقریباً 600 ہندوستانیوں کا اگلے دو دنوں کے دوران بھارت پہنچنے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔

بھارتی خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی نے ہندوستانی وزارت خارجہ کے حوالے سے کہا ہے کہ 200 ہندوستانیوں کا ایک گروپ سنیچر کی رات عراقی ایئرویز کے خصوصی طیارے سے نئی دہلی پہنچ رہا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اگلے دو دنوں میں تقریباً 400 دیگر ہندوستانی بھی عراق سے واپس آنے والے ہیں۔

اس سے پہلے عراق میں محصور 46 بھارتی نرسیں ہفتہ کو اپنے آبائی شہر کوچّی پہنچ گئیں۔ یہ تمام نرسیں عراق کے شہر تكریت میں واقع ایک ہسپتال میں کام کرتیں تھیں۔

جون کے شروع میں اسلامی شدت پسند گروپ دولت اسلامیہ عراق و شام (داعش یا آئی ایس آئی ایس) نے تكریت شہر پر قبضہ کر لیا تھا اور اس کے بعد سے یہ نرسیں ایک طرح سے وہاں محصور تھیں۔

بہر حال ان کی رہائی کے متعلق سب سے اہم سوال یہ اٹھایا جا رہا ہے کہ داعش کے شدت پسندوں نے بھارتی نرسوں کو اپنی قید سے کیونکر رہا کیا اور انھیں بھارت کیوں آنے کی اجازت دی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عراق کے علاوہ دوسرے خلیجی ممالک میں بھارتی زیادہ تعداد میں ہیں

نرسوں کی رہائی کیسے ممکن ہو پائی اس بارے میں بھارتی وزارت خارجہ نے کچھ بھی بتانے سے انکار کر دیا ہے۔

یہاں تک کہ کیرالہ کے وزیر اعلیٰ اومن چینڈی بھی اس موضوع پر کچھ بولنا نہیں چاہتے۔ ان کے مطابق ’یہ قومی مفادات سے جڑا معاملہ ہے۔‘

کیرالہ کے وزیر اعلیٰ نے بی بی سی کو بتایا کہ ’گذشتہ تین دن سے ان کی بات چیت بغداد کے بھارتی سفارت خانے کے حکام کے ساتھ، وزارت خارجہ کے حکام اور بھارت کی وزیر خارجہ سشما سوراج کے ساتھ چل رہی تھی۔‘

انھوں نے کہا کہ ’میں اتنا ضرور کہنا چاہوں گا کہ مجھے سب کا مکمل تعاون ملا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ GOVT
Image caption کیرالہ کے وزیراعلی اومن چینڈی نے بھارتی نرسوں کا کوچّی ایئرپورٹ پر استقبال کیا

دوسری جانب بھارت لوٹنے والی نرسوں میں خوشی کے ساتھ کچھ خدشات بھی ہیں اور وہ روزی روٹی اور قرض کے متعلق ہیں۔

نرس نیتی کے بھائی سلومن جان نے بتایا: ’ہمارے سامنے بالکل نئے حالات ہیں۔ سب سے بڑا سوال ہے کہ اب گزر بسر کیسے ہوگا۔ میری بہن چھ ماہ قبل عراق گئی تھی اور اس نے اس کے لیے ایک لاکھ 60 ہزارقرض لیا تھا۔ گذشتہ چار ماہ سے تنخواہ بھی نہیں ملی ہے اور ابھی صرف 30 ہزار قرض ہی چکایا جا سکا ہے۔‘

صحافی عمران قریشی کے مطابق 46 میں سے صرف 14 نرسیں ہی واپسی چاہتی تھیں باقی سب دوسری جگہ کام چاہتی تھیں تاکہ اپنے قرض چکا سکیں۔

جب اس بارے میں وزیر اعلیٰ سے بات پوچھی گئي کہ کیا ان لوگوں نے تعلیم اور روزگار کے لیے جو قرض لیا اسے معاف کیا جائے گا تو انھوں نے کہا کہ ’اس بارے میں غور کیا جائے گا۔‘

اسی بارے میں