’کشمیری رہنماؤں سے بات چیت نئی بات نہیں‘

Image caption بھارت میں پاکستان کے سفیر عبدالباسط نے نئی دہلی میں بدھ کو ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے دونوں ممالک کے تعلقات کی اہمیت پر زور دیا

بھارت میں پاکستان کے ہائی کمشنر عبدالباسط نے ایک بار پھر کہا ہے کہ جموں کشمیر متنازع علاقہ ہے لہٰذا اس معاملے پر تمام فریقوں سے بات چیت کرنا ضروری ہے۔

انھوں نے بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے علیحدگی پسند رہنماؤں سے بات چیت کے مسئلے پر کہا کہ بات چیت کا یہ عمل طویل عرصے سے چلا آ رہا ہے اور اس میں نیا کچھ نہیں ہے۔

انھوں نے کہا: ’ہمارا خیال ہے کہ قیام امن کے عمل میں کشمیری جائز فریق ہیں۔‘

اس کے ساتھ انھوں نے یہ بھی کہا کہ ’پاکستان اپنے عہد کا پابند ہے اور بھارت کے ساتھ اچھے تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے۔‘

نئی دہلی میں بدھ کے روز ایک پریس کانفرنس میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے عبدالباسط نے کہا کہ ’دونوں ممالک کے درمیان سیکریٹری سطح کی بات چیت کو منسوخ کیے جانے سے دونوں ممالک کے درمیان جاری قیام امن کے عمل پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔‘

واضح رہے کہ بھارت نے 25 اگست سے سیکریٹری سطح کے مجوزہ مذاکرات کو منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا تھا جس کے بعد متعدد حلقوں سے اس پر حیرت کا اظہار کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption منگل کو حریت رہنما علی شاہ گیلانی نے نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمشنر سے ملاقات کی

منگل کو عبدالباسط نے نئی دہلی میں موجود پاکستانی ہائی کمیشن میں حریت رہنما علی شاہ گیلانی سے ملاقات کی اور اس کے بعد میر واعظ عمر فاروق اور یاسین ملک سے بھی ملاقات کی۔

عبدالباسط نے یہ بھی کہا کہ ’پاکستان بھی دہشت گردی سے متاثر ہے، ایسے میں دونوں ممالک کے درمیان باہمی رشتوں میں بہتری آنے سے ہی دونوں ممالک کی ترقی ممکن ہے۔‘

پاکستانی ہائی کمشنر نے کہا کہ پاکستان بھارت کی یوم آزادی کے موقعے پر بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی تقریر کی تعریف کرتا ہے جس میں انھوں نے سارک ممالک کے درمیان تعاون کی بات کہی تھی۔

تاہم انھوں نے یہ بھی کہا کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان بہتر باہمی تعلقات کا اثر سارک ممالک کے درمیان تعلقات پر بھی پڑے گا۔

پاکستان کی جانب سے جنگ بندی کی خلاف ورزی کے معاملے پر انھوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے بھی گذشتہ دنوں 57 بار جنگ بندی کے معاہدے کی خلاف ورزی ہوئی ہے۔

دوسری جانب امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان میری ہارف نے کہا ہے کہ امریکہ، بھارت اور پاکستان کے درمیان مذاکرات کا عمل دوبارہ شروع کرانے کی پوری کوشش کر رہا ہے۔

اسی بارے میں