افغانستان: طالبان حملے میں 29 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حملے میں 160 سے زائد افراد زخمی ہوئے جبکہ ادرگرد کی عمارات کو بھی شدید نقصان پہنچا

افغانستان میں حکام کے مطابق طالبان کے مشرقی صوبے غزنی میں کیے جانے والے حملے میں 19 حملہ آوروں سمیت 29 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

پولیس کے مطابق مرنے والوں میں آٹھ سکیورٹی اہلکار اور دو عام شہری بھی شامل ہیں جبکہ حملے میں تمام 19 حملہ آور بھی ہلاک ہو گئے۔

مسلح افراد نے افغان پولیس اور انٹیلی جنس کے دفاتر کو ٹرک میں موجود دو بموں سے اڑا دیا۔

طالبان کی جانب سے کیے جانے والے اس حملے میں 160 سے زائد افراد زخمی ہوئے جبکہ اردگرد کی عمارات جس میں قصبے کا میوزیم شامل ہے کو بھی شدید نقصان پہنچا۔

کابل میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار بلال سروری کا کہنا ہے کہ طالبان شدت پسندوں کا غزنی صوبے کے متعدد علاقوں پر کنٹرول ہے۔

غزنی میں مقامی ڈاکٹروں نے بی بی سی کو بتایا کہ زخمی ہونے والے کم سے کم 164 عام شہریوں کو متعدد ہسپتالوں میں پہنچایا گیا۔

اطلاعات کے مطابق زیادہ تر افرار عمارات کے شیشے ٹوٹنے سے زخمی ہوئے۔

ادھر طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے 19 حملہ آوروں نے حکومتی عمارات پر چھوٹے اور بھاری ہتھیاروں سے حملہ کیا۔

دوسری جانب بلال سروری کے مطابق چند حملہ آوروں کو انٹیلی جنس ایجنسی اور پولیس کمپاؤنڈ کے قریب ایک مقامی ریستوران تک رسائی مل گئی جو اس جگہ سے صرف 20 میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

غزنی کے ڈپٹی پولیس چیف اسد اللہ انصافی کا کہنا ہے کہ تین گھنٹے تک جاری رہنے والی اس کارروائی سے پہلے حکومتی کمپاؤنڈ میں دو بم دھماکے ہوئے۔

اسی بارے میں