کانپور کی ’کھانے‘ والی چائے

تصویر کے کاپی رائٹ ROHIT GHOSH
Image caption بھولا ٹی سٹال کی چائے کی قیمت 80 روپے سے لے کر 300 روپے تک ہے

چائے تو سب پیتے ہیں لیکن اگر کوئی آپ سے پوچھے کہ آپ چائے کھائیں گے تو شاید آپ چونک جائیں گے۔

لیکن بھارت کے شہر کانپور کے لاٹوش روڈ پر نوولٹي سینما کے احاطے میں موجود بھولا ٹی سٹال میں آپ کو اتنی گاڑھی چائے ملے گی کہ آپ کو وہ چمچ سے کھانی پڑےگی۔

عموماً سڑک کنارے کسی بھی چائے کے ٹھیلے یا دکان پر ایک چائے آپ کو زیادہ سے زیادہ 10 روپے کی مل جائے گی۔ لیکن چمچ سے کھانے والی بھولا ٹی سٹال کی چائے کی قیمت 80 روپے سے لے کر 300 روپے تک ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ ROHIT GHOSH
Image caption جب چائے میں اتنی مہنگی چیزیں پڑ رہی ہیں تو چائے تو مہنگی ہوگی ہی

بھولا ٹی سٹال چلانے والے رجن واجپئی ’کھانے‘ والی چائے میں کم سے کم 15 قسم کے میوے اور دودھ کی جگہ ملائی ڈالتے ہیں۔ اس کے علاوہ چائے کی پتی اور چینی تو پڑتی ہی ہے۔

رجن واجپئی نے بی بی سی کو بتایا ’چائے بنانا ایک فن ہے۔ میں چائے میں میوے جیسے کاجو، کشمش، بادام، خربوزے کا بیج، مونگ پھلی، گری، کریم ڈالتا ہوں۔ اسی لیے میری چائے اتنی گاڑھی ہوتی ہے کہ لوگوں کو اس کو چمچ سے کھانی پڑتی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ ROHIT GHOSH
Image caption بھولا ٹی سٹال چلانے والے رجن واجپئی ’کھانے‘ والی چائے میں کم سے کم 15 قسم کے میوے ڈالتے ہیں

ٹی سٹال پر جو بورڈ لگا ہے اس کے حساب سے سب سے زیادہ سستی چائے آٹھ روپے اور سب سے مہنگی 100 روپے کی ہے۔

رجن کا کہنا ہے ’جب چائے میں اتنی مہنگی چیزیں پڑ رہی ہیں تو چائے تو مہنگی ہوگی ہی۔ اب میوے اور دودھ کے دام بڑھ گئے ہیں۔ میں ایک دو دن میں نیا بورڈ لگانے والا ہوں۔‘

عام طور پر خیال کیا جاتا ہے کہ زیادہ چائے پینا صحت کے لیے خراب ہوتا ہے، مگر رجن واجپئی کا دعویٰ ہے کہ ان کی چائے جسم کے لیے فائدہ مند ہے۔