چین: قدیم ترین مسجد کے امام کے قاتلوں کو سزا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption جمعہ طاہر کو عیدگاہ مسجد کی امامت پر چین کی کمیونسٹ پارٹی نے تعینات کیا تھا

چین کے سرکاری میڈیا کے مطابق ملک کی سب سے بڑی مسجد کے امام کو ہدف بنا کر قتل کرنے کے جرم میں دو نوجوانوں کو سزائے موت اور ایک کو عمر قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔

مسلم اقلیتی برادری اویغور سے تعلق رکھنے والے 74 سالہ جمعہ طاہر صوبہ سنکیانگ کے شہر کاشغر کی مرکزی مسجد کے امام تھے۔

انھیں 30 جولائی کو نمازِ فجر کے بعد مسجد کے باہر چاقو گھونپ کر ہلاک کیا گیا تھا۔

سزا سناتے ہوئے چینی عدالت نے کہا ہے کہ حملہ کرنے والے افراد مذہبی انتہاپسندی کا شکار تھے۔

اطلاعات کے مطابق پولیس امام مسجد کی ہلاکت میں ملوث متعدد افراد کو پہلے ہی آپریشن کے دوران ہلاک کر چکی ہے۔

کاشغر کی عیدگاہ مسجد 600 سال قدیم ہے اور جمعہ طاہر کو اس کی امامت پر چین کی کمیونسٹ پارٹی نے تعینات کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اویغور زیادہ تر مسلمان ہیں اور خود کو وسطی ایشیا سے قریب تر تصور کرتے ہیں

کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ جمعہ طاہر مسلم اقلیتی برادری اویغور میں پسند نہیں کیے جاتے تھے کیونکہ وہ مسجد میں تبلیغ کرتے ہوئے کمیونسٹ پارٹی کی پالیسیوں کی تعریف کرتے تھے۔

ہمارے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ وہ اس سرکاری موقف کی بھی تائید کرتے تھے جس میں سنکیانگ میں تشدد کی ذمہ داری اویغور برادری پر ڈالی جاتی ہے۔

چین میں اویغور افراد کی مسلح تحریک کے بارے میں خدشات میں اضافہ ہو رہا ہے

اویغور زیادہ تر مسلمان ہیں اور خود کو وسطی ایشیا سے قریب تر تصور کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ انھیں ہان چینیوں کی سنکیانگ میں بڑے پیمانے پر نقل مکانی پر بھی اعتراض ہے۔

دوسری جانب بیجنگ کا کہنا ہے کہ اویغور دہشت گرد علیحدگی کی پرتشدد تحریک چلا رہے ہیں۔

اسی بارے میں