محافظ پرگاڑی چڑھانے والے کروڑپتی بزنس مین پر مقدمہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس نے پہلے ہی تمباکو کے تاجر محمد نشام کے خلاف اقدامِ قتل کا مقدمہ درج کر لیا تھا

بھارت میں پولیس کے مطابق ایک کروڑپتی کاروباری شخصیت پر اپنے محافظ کو قتل کرنے کے الزام کے تحت فردِ جرم عائد کی گئی ہے۔

ریاست کیرالہ کے شہر تھریسور سے تعلق رکھنے والے محمد نشام پر الزام ہے کہ انھوں نے اپنی ہمر جیپ سے چندربوس نامی سکیورٹی گارڈ کو جان بوجھ کر ٹکر ماری اور پھر ان پر لوہے کی سلاخ سے حملہ کیا۔

50 سالہ چندربوس کو اس واقعے کے بعد ہسپتال لے جایا گیا جہاں وہ دو ہفتے زیرِ علاج رہنے کے بعد پیر کو زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسے۔

اطلاعات کے مطابق 39 سالہ نشام کو غصہ تھا کہ چندربوس نے ان کی رہائش گاہ کا بیرونی دروازہ کھولنے میں تاخیر کی تھی۔

پولیس نے پہلے ہی تمباکو کے تاجر محمد نشام کے خلاف اقدامِ قتل کا مقدمہ درج کر لیا تھا تاہم اب اس میں قتلِ عمد کی دفعہ شامل کی گئی ہے۔

نشام کے خلاف ایک مقدمہ پہلے ہی زیرِ سماعت ہے جو 2013 میں اپنے نو سالہ بیٹے کو اپنی فراری کار چلانے کی اجازت دینے کے بارے میں ہے۔

بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق وہ ماضی میں بھی قانون کی خلاف ورزیوں میں ملوث رہے ہیں اور 2013 میں ہی انھوں نے گاڑی روکنے کا حکم دینے والی ایک خاتون پولیس افسر کو اپنی رولز رائس کار میں بند کر دیا تھا۔