سوائن فلو کے پیشِ نظر احمد آباد میں دفعہ 144 نافذ

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption احمد آباد کی انتظامیہ نے ضلع میں ہونے والے عوامی اجتماعات کو منسوخ یا ملتوی کرنے کا مشورہ دیا ہے

سوائن فلو کے خطرے کے پیشِ نظر بھارت کی ریاست گجرات کے دارالحکومت احمد آباد میں دفعہ 144 نافذ کر کے لوگوں کے اجتماع پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

گجرات میں سوائن فلو کی وجہ سے اس سال اب تک 219 افراد ہلاک ہو چکے ہیں، جبکہ مریضوں کی تعداد 3،500 سے تجاویز کر گئی ہے۔

منگل کو ریاست میں سوائن فلو کے 190 نئے مریض سامنے آئے جن میں 100 سے زیادہ مریضوں کا تعلق ضلع احمد آباد سے ہی تھا۔

دفعہ 144 کے نفاذ کے بعد ضلعے میں ہونے والے سارے موسیقی کے میلے، پارٹیاں اور میراتھن ریس منسوخ کر دی گئی ہے۔

حکومت نے ایک بیان میں کہا ہے کہ بیماری کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے دفعہ 144 نافذ کی گئی ہے اور اب بغیر اجازت ایک جگہ پانچ سے زیادہ لوگوں کے جمع ہونے پر پابندی رہے گی۔

تاہم شادی کی تقاریب پر اس پابندی کا نفاذ نہیں ہوگا۔

احمد آباد کے ضلع كلكٹریٹ کے مطابق احمد آباد سمیت پورے گجرات میں سوائن فلو کے معاملے بڑھے ہیں۔

سوائن فلو کا وائرس متعدی ہے اور عام طور پر پرہجوم جگہوں پر ہوا کے ذریعہ پھیلتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption احمد آباد میں سکول اور کالجوں میں جن طلبہ کو کھانسي کی شکایت تھی انہیں چھٹی دے دی گئی ہے

انتظامیہ نے ضلع میں ہونے والے عوامی اجتماعات کو منسوخ یا ملتوی کرنے کا مشورہ دیا ہے اور اگر منتظمین ان کا انعقاد چاہتے ہیں تو حکام سے اس کی پہلے اجازت لینا ضروری ہوگا۔

اس کے علاوہ ہورڈنگز اور پوسٹرز کے ذریعے لوگوں کو بچاؤ سے متعلق اقدامات برتنے کو کہا جائے گا۔

گجرات کے وزیر صحت شنکر چوہدری خود بھی سوائن فلو کی لپیٹ میں ہیں۔

احمد آباد میں سکول اور کالجوں میں جن طلبہ کو کھانسي کی شکایت تھی انہیں چھٹی دے دی گئی ہے کیونکہ اب تک بیماری سے مرنے والوں میں کئی طلبہ بھی ہیں۔

گجرات میں اپوزیشن پارٹی کانگریس نے حکومت پر اس معاملے سے نمٹنے میں کوتاہی پر کڑی تنقید کی ہے جبکہ حکومت کا دعوی ہے کہ وہ اس معاملے میں ہرممکن قدم اٹھا رہی ہے۔

گجرات میں سوائن فلو پہلے بھی بڑے پیمانوں پر ہلاکتوں کی وجہ بن چکا ہے۔

سنہ 2009 میں یہاں سوائن فلو سے 125 افراد ہلاک ہوئے تھے، جبکہ 2010 میں یہ تعداد 363 تک جا پہنچی تھی۔

اسی بارے میں