’زلزے نے نیپال کا ثقافتی ورثہ مسمار کر دیا‘

بھکتا پور میں تباہی کا منظر تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption بھکتا پور کے قدیم شہر میں تباہی سے وہاں کے رہائشی بری طرح متاثر ہوئے ہیں

نیپال میں سنیچر کو آنے والے زلزلے کے جھٹکے بعض ذرائع کے مطابق زیادہ سے زیادہ صرف ایک منٹ تک محسوس کیے گئے لیکن یہ نیپال کے صدیوں پرانے تاریخی ورثے کی تباہی کے لیے کافی تھے۔

یونیسکو کی جانب سے کھٹمنڈو میں بین الاقوامی ثقافتی ورثہ قرار دیے جانے والے سات میں سے چار مقامات کو اس زلزلے سے بری طرح نقصان پہنچا ہے۔

نیپالی ٹائمز کے مدیر کندا دکشت نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ تباہی ’ثقافتی طور پر ایک ایسا نقصان ہے جس کا اندازہ نہیں لگایا جا سکتا‘ لیکن ان کے مطابق ان قدیم عمارتوں دوبارہ تعمیر کیا جا سکتا ہے۔

نیپال کے قدیم شہر بھکتاپور میں اطلاعات کے مطابق گھروں کی تقریباً نصف تعداد کو نقصان پہنچا اور 80 فیصد مندر بھی تباہ ہوئے ہیں۔

تباہ ہونے والی دیگر عمارتوں میں کھٹمنڈو کا دہراہرا ٹاؤر بھی شامل ہے۔

نیپال کے پہلے وزیر اعظم کی جانب سے سنہ 1832 میں تعمیر کیے گئے اس ٹاور کو بِھمسن ٹاؤر بھی کہا جاتا ہے جو سیاحوں میں بے حد مقبول تھا جہاں وہ 200 سیڑھیاں چڑھ کر شہر کا نظارہ کر سکتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دہرارا ٹاور زلزے سے پہلے اور بعد کا منظر

زلزلے کے فوراً بعد منظر عام پر آنے والی تصاویر میں کھٹمنڈو کے قدیم شہر میں واقع معروف چوک دربار سکوائر میں تباہی کے مناظر دیکھے جا سکتے ہیں۔ یہ سکوائر یونیسکو کی فہرست میں شامل ہے۔

اس سکوائر کے قریب مختلف محل اور مندر موجود ہیں اور یہ یونیسکو کے مطابق کھٹمنڈو شہر کا ایک ’معاشرتی، مذہبی اور شہری زندگی کا مرکزی حصہ ہے‘۔

بھکتا پور اور پٹن کے دربار سکوائر بھی زلزلے کے جھٹکوں کا نشانہ بنے ہیں۔

بھکتاپور کے مرکزی مندر کی چھت مکمل طور پر تباہ ہو گئی ہے جبکہ 16 ویں صدی میں قائم کیا جانا والا وٹسالا دُرگا مندر بھی زلزلے میں مسمار ہوگیا ہے۔ یہ مندر اپنے ریتیلے پتھر کی دیواروں اور سونے کا پانی چڑھی مورتیوں کی وجہ سے مشہور تھا۔

پٹن کے تیسری صدی میں قائم کیے جانے والے سکوائر میں بھی کئی عمارتیں مسمار ہوگئی ہیں۔

پانچویں صدی میں تعمیر کیے جانے والے سوایم بوناتھ مندر میں بھی تباہی ہوئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ other
Image caption کھٹمنڈو کے دربار سکوائر کا زلزے سے کچھ عرصہ پہلے کا منظر
تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دربار سکوائر کا زلزے کے بعد کا منظر

ویڈیو فٹیج میں تباہ ہونے والے عمارت کے سامنے والے حصے کو دیکھا جا سکتا ہے۔

وہاں موجود بدھا کے مجسمے کو نقصان نہیں پہنچا اور وہ ابھی بھی اپنی جگہ موجود ہے۔

اطلاعات کے مطابق بدھ ناتھ کا مجسمہ اور پشو پتیناتھ کے ہندو مندر کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

تاریخ دان پرشتم لوچان نے ایکانتی پور ڈاٹ کان نامی ویب سائٹ کو بتایا ’کھٹمنڈو، بھکتا پور اور للت پور (پٹن) میں بین الاقوامی ورثہ قرار دیے جانے والے کئی مقامات کو ہم کھو چکے ہیں اور انھیں ان کی اصل حالت میں بحال نہیں کیا جا سکتا۔‘

خیال رہے کہ سنہ 1934 میں تباہ ہونے والی کئی عمارتوں کو بحال کر دیا گیا تھا جن میں دہرارا ٹاور بھی شامل تھا۔

اسی بارے میں