’زلزلے کےمرکزی علاقے 90 فیصد سے زیادہ تباہ ، مزید امداد کی اپیل‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزارتِ داخلہ حکام کا کہنا ہے کہ 20 ہیلی کاپٹرز امدادی اشیا لے کر دور دراز کے علاقوں میں جا رہے ہیں

عالمی امدادی ادارے ریڈ کراس کا کہنا ہے کہ نیپال میں سنیچر کو آنے والے زلزلے کے مرکزی علاقے ’تقریباً مکمل طور پر تباہ‘ ہو چکے ہیں جبکہ حکومت نے عالمی برادری سے مزید امدادی طیارے مانگے ہیں۔

زلزلے کی تباہی کا جائزہ لینے والی ریڈ کراس کی ٹیم نے کہنا ہے کہ متاثرین مایوسی کا شکار ہیں۔

اقوامِ متحدہ کی اپیل

خیال رہے کہ نیپالی حکام کے مطابق زلزلے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 6204 تک پہنچ چکی ہے جبکہ زخمیوں کی تعداد 13932 ہے۔ ملک کے وزیراعظم نے دو روز قبل اپنے بیان میں اس خدشے کا اظہار کیا تھا کہ ہلاکتوں کی تعداد 10 ہزار تک پہنچ سکتی ہے۔

مزید ایئر کرافٹ کی ضرورت

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ملبے سے بحفاظت زندہ نکالا جانے والا نوجوان

بتایا جا رہا ہے کہ اگرچہ امدادی ٹیمیں دارالحکومت کھٹمنڈو اور اس کے گردونواح میں موجود متاثرین کی مدد کر رہی ہیں تاہم دوردراز کے علاقوں تک رسائی میں اب بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ انھیں پہاڑی علاقوں میں متاثرین تک امداد پہنچانے اور زخمیوں کو منتقل کرنے ہسپتالوں میں منتقل کرنے کے لیے مزید ایئر کرافٹ کی ضرورت ہے۔

نیپال کے وزیر خزانہ کا بیان بھی سامنے آیا ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ ملک کے زلزلے سے متاثرہ علاقوں کی تعمیرِ نو کے لیے دو ارب ڈالر کی ضرورت ہے۔

وزارتِ داخلہ حکام کا کہنا ہے کہ 20 ہیلی کاپٹرز امدادی اشیا لے کر ضلع ڈولاکھا، رشوا، نواکوٹ، ڈھاڈنگ، کورکھا اور سندھو پلچوک پہنچے ہیں۔

بی بی سی کے نامہ نگاروں کے مطابق اگرچہ چین کی جانب سے مزید ہیلی کاپٹرز بھجوائے جانے کی توقع ہے لیکن نیپالی حکام نے صورتحال کو دیکھتے ہوئے عالمی برادری سے مزید ہوائی جہاز فراہم کرنے کو کہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پہاڑی علاقوں میں لوگ اب بھی امداد کے منتظر ہیں

زلزلے سے 80 لاکھ نیپالی متاثر ہوئے ہیں جو کہ ملک کی کل آبادی کا چوتھا حصہ ہے۔

ایک اندازے کے مطابق زلزلے کے نتیجے میں چھ لاکھ مکانات کو نقصان پہنچا اور 70 ہزار مکمل طور پر تباہ ہوگئے۔

بدھ کو حکام نے امدادی کارروائیوں کے دوران کھٹمنڈو سے ایک 15 سالہ نوجوان اور ایک 20 سالہ لڑکی کو ملبے تلے سے زندہ باہر نکالا۔ تاہم امدادی کارروائیوں پر متاثرین مطمعن دکھائی نہیں دے رہے اور مظاہروں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

جمعے کو وزارتِ داخلہ حکام کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ کھٹمنڈو میں جاری امدادی کارروائیوں کا مرکز شدید تباہ شدہ علاقے میں جن میں مرکزی بس سٹیشن کے نواحی علاقے اور تاریخی مقامات شامل ہیں۔

ریڈ کراس نے اپنے تحریری بیان میں کہا ہے کہ سندھو پلچوک نیپال کے سب سے زیادہ متاثرہ علاقوں میں شامل ہے۔

’ہماری ٹیم سندھو پلچوک اور چوتارا سے واپس لوٹی ہیں ، رپورٹس کے مطابق وہاں 90 فیصد سے زیادہ گھر تباہ ہو چکے ہیں‘

ایشیا کے لیے ادارے کے سربراہ جگن چاپاگین کا کہنا ہے کہ لوگ ہاتھوں سے ملبہ ہٹا کر یہ جاننے کی کوشش کر رہے ہیں کہ ان کے خاندان میں کون ہے جو اب بھی زندہ ہے؟

ادارے کا کہنا ہے کہ دیگر متاثرہ علاقوں میں بھی کم وپیش ایسی ہی صورتحال ہو سکتی ہے۔

بتایا گیا ہے کہ صرف سندھو پلچوک میں 40 ہزار مکانات تباہ ہوئے۔

اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے کہ اس صورتحال میں ملک کی دو تہائی آبادی بھی متاثر ہو گی جو کسانوں پر مشتمل ہے۔

اسی بارے میں