چین کے چڑیا گھر میں شیرکو گولی ماری گئی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption چینی میڈیا میں یہ بات نہیں بتائی گئی ہے کہ حملے کے بعد شیر اپنے باڑے سے نکلنے میں کس طرح کامیاب ہوا

چین کے ایک چڑیا گھر میں ایک شیر کو اپنے رکھوالے کو مارنے اور اپنے احاطے سے بھاگنے کی وجہ سے گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا ہے۔

یہ واقعہ اتوار کو چین کی مشرقی ریاست شانڈونگ کے ٹائیان ٹائگر ماؤنٹین پارک میں پیش آیا۔

حکام کا کہنا ہے کہ جب شیر کے احاطے کی صفائی کرنے والے 65 سالہ ملازم صفائی کررہے تھے تو شیر نے اس کے شانے کو دبوچ لیا جو بعد میں زخموں کی تاب نہ لا سکے۔

اس حملے کے بعد شیر چڑیا گھر میں پولیس کی گولی سے ہلاک ہونے سے قبل تقریباً ایک گھنٹے تک کھلا گھومتا رہا۔

چینی میڈیا میں یہ بات نہیں بتائی گئی ہے کہ حملے کے بعد شیر اپنے باڑے سے نکلنے میں کس طرح کامیاب ہوا۔

حکام نے پارک کے دروازے پر سٹیل کی رکاوٹیں کھڑی کردیں جبکہ چڑیا گھر کے سٹاف اور صبح کو سوئمنگ کے لیے آنے والے افراد کو چڑیا گھر کے باہر کر دیا گيا۔

بیجنگ یوتھ ڈیلی اخبار کے مطابق پولیس کے ایک ترجمان نے کہا کہ انھوں نے مقامی پولیس اور سپیشل ٹاسک فورس بلا لی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ XINHUA
Image caption بہت سے لوگوں نے چین میں چڑیا گھر کی خراب دیکھ ریکھ کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے

انھوں نے کہا کہ وہ شیر کو ایک دیوار تک پہنچانے میں کامیاب رہے اور پھر پارک میں آنے والے لوگوں کی حفاظت کے مد نظر اسے گولی مار دی گئی۔

اخبار کے ایک رپورٹر نے بتایا کہ مقامی وقت کے مطابق صبح آٹھ بجے کے بعد انھوں نے ایک گولی چلنے کی آواز سنی پھر دس منٹ بعد ’گولیوں کی مسلسل آوازیں آتی رہیں۔‘

پارک کو دوپہر کے بعد لوگوں کے لیے پھر سے کھول دیا گيا۔ اس واقعہ پر چین کے سوشل نٹ ورک پر بحث و مباحثہ جاری ہے۔ بہت سے افراد کا خیال ہے کہ کیا شیر کا ہلاک کیا جانا ضروری تھا جبکہ بعض لوگوں نے چڑیا گھر میں خراب حفاظتی انتظامات کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

ایک شخص نے ویئیبو پر لکھا: ’انسان شیروں کی تندی و تیزی کو پسند کرتے ہیں لیکن اس کی وجہ سے ان کی آزادی کھو گئی ہے، انھیں بھوکا اور خراب حالات میں رکھا جاتا ہے اور اب اس نے اپنی جان گنوا دی ہے۔‘

اسی بارے میں