دہلی میں بھی میگی نوڈلز میں سیسہ

Image caption کمپنی کا موقف ہے کہ ان کی جانب سے نوڈلز میں سیسہ نہیں ڈالا گیا

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی کے حکام کا کہنا ہے کہ شہر کی دکانوں پر موجود میگی نوڈلز کے نمونوں میں بڑی مقدار میں سیسہ پایا گیا ہے۔

ایک ہفتے قبل شمالی ریاست اترپردیش میں بھی فوڈ انسپکٹروں نے کہا تھا کہ میگی نوڈلز میں سیسہ ہے جبکہ ریاست اتراکھنڈ میں بھی اس سلسلے میں تحقیقات جاری ہیں۔

دو منٹ میں جھٹ پٹ تیار ہو جانے والے میگی نوڈلز بھارت میں بہت مقبول ہیں۔

اس وقت بھارت کی بہت سی ریاستوں میں ان نوڈلز کی جانچ پڑتال کے لیے لیبارٹری ٹیسٹ کیے جا رہے ہیں۔

نوڈلز بنانے والی کمپنی نیسلے انڈیا نے اس الزام کو مسترد کیا ہے کہ ان کے نوڈلز غیر صحت بخش یا غیر محفوظ ہیں۔

اترپردیش میں چند روز قبل دو درجن میگی نوڈلز کے پیکٹس کے لیبارٹری ٹیسٹ کے بعد سے یہ تنازع کھڑا ہوا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ میگی نوڈلز میں سیسے کی میعاری حد سے سات گنا زیادہ سیسے کے مقداد پائی گئی۔

دہلی کی حکومت کا کہنا ہے کہ فوڈ انسپیکٹروں نے ٹیسٹ کے لیے جو 13 پیکٹ اٹھائے ان میں سے دس میں سیسہ موجود تھا۔

حکام نے بتایا ہے کہ پانچ نمونوں میں مونوسوڈیم گلوٹامیٹ (ایم ایس جی) نامی مرکب موجود تھا جسے چائنیز کھانوں میں ذائقہ بڑھانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

اس کے علاوہ اس میں محفوظ سبزیاں، سوپ اور گوشت شامل تھا۔

تاہم دوسری جانب خوراک کے ماہرین کا کہنا ہے کہ ایم ایس جی کی زیادہ مقدار کی موجودگی سے سر میں درد، سینے میں تکلیف اور متلی کی شکایت ہو سکتی ہے اور اس کے طویل عرصے تک استعمال سے اعصابی نظام کو نقصان پہنچتا ہے۔

مقامی ٹی وی چینل این ڈی ٹی وی نے دہلی کے وزیرِ صحت کا بیان جاری کیا ہے، جس میں انھوں نے کہا کہ حکومت اس کے خلاف کارروائی کرے گی اور قانونی چارہ جوئی کرے گی اور ملاوٹ آمیز خوراک کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔

Image caption نوڈلز میں سیسے کی موجودگی کے بعد سے بھارت میں مختلف ریاستوں میں ان کی فروخت بند کر دی گئی ہے

رپورٹوں کے مطابق حکومت نے نیسلے کمپنی کے حکام کو طلب کیا ہے اور کہا ہے کہ ’مزید کارروائی ٹیسٹوں کے تفصیلی نتائج سامنے آنے کے بعد کی جائے گی۔‘

اتر پردیش میں نوڈلز میں سیسے کی موجودگی کے انکشاف کے بعد بھارتی ریاست کیرالہ میں بھی حکام نے حکومت کے ماتحت چلنے والی ایک ہزار دکانوں پر میگی نوڈلز کی فروخت پر پابندی عائد کر دی ہے۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق فوڈ اینڈ سول سپلائز منسٹر انوپ جیکب کے دفتر سے بتایا گیا ہے کہ یہ تنازع حل ہونے تک میگی نوڈلز کی فروخت پر عارضی پابندی عائد کی گئی ہے۔

اطلاعات کے مطابق بھارت کی دیگر ریاستوں گجرات، کرناٹک، ہریانہ اور گوا میں بھی میگی نوڈلز کے ٹیسٹ کرنے کے احکامات جاری کیے گئے ہیں۔

نیسلے انڈیا سوئٹزرلینڈ میں موجود نیسلے کی ماتحت کمپنی ہے۔

کمپنی کا کہنا ہے کہ اس نے اپنے ادارے کی لیبارٹری اور باہر کی ایک لیبارٹری سے بھی نوڈلز کا ٹیسٹ کروایا ہے اور ان کی پروڈکٹ کھانے کے لیے محفوظ ہے۔

کمپنی کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ ان کی جانب سے ایم ایس جی نامی مرکب کو نوڈلز میں استعمال نہیں کیا گیا اور اگر یہ موجود ہے تو یہ نوڈلز میں موجود قدرتی اجزا سے آیا ہو گا۔

یہ بھی کہا گیا ہے کہ کمپنی مسلسل بنیادوں پر نوڈلز میں سیسے کی مقدار کی جانچ پڑتال کرتی ہے جو کہ ضابطے کے مطابق ضروری ہے۔

اسی بارے میں