دولت اسلامیہ سے تعلق کا شبہ، چار بھارتی شہری ملک بدر

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption نام نہاد تنظیم دولت اسلامیہ کے خلاف بین الاقوامی اتحاد میں متحدہ عرب امارات بھی شامل ہے

بھارت کی جنوبی ریاست کیرالہ سے تعلق رکھنے والے چار نوجوانوں کو شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے ساتھ مبینہ تعلق کی وجہ سے متحدہ عرب امارات سے منگل کو واپس بھیج دیا گیا ہے۔

بھارت کی سرکاری نیوز ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق چار مزید افراد کو متحدہ عرب امارات سے واپس بھارت بھیجے جانے کی بات کی جا رہی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ریاست کیرالہ کے کوزیکوڈ اور تھیرو وننتھاپورم ہوائی اڈوں پر اترنے کے بعد ان نوجوانوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

بھارتی اخبار دا ہندو کے مطابق ان چار نوجوانوں میں ایک ہندو بھی شامل ہے جس پر دولت اسلامیہ کا حامی ہونے کا شبہ ظاہر کیا گیا ہے۔

خبررساں ادارے کے مطابق ان نوجوانوں کی واپسی 37 سالہ افشاں جبیں عرف ’نکی جوزف‘ کی وطن واپسی کے بعد ہوئی ہے جنھیں دولت اسلامیہ کے لیے نوجوانوں کی مبینہ تقرری کے لیے بھارت واپس بھیجا گیا تھا۔

پی ٹی آئی کے مطابق یہ اقدام دہشت گردی کے خلاف بھارت اور متحدہ عرب امارات کے تعاون کے نتیجے میں ممکن ہو سکا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ واپس بھیجے جانے والے چاروں نوجوانوں کا ابھی تک دولت اسلامیہ سے براہ راست کوئی تعلق نظر نہیں آیا ہے تاہم ان پر ’دولت اسلامیہ کے انقلابی لٹریچر کو فیس بک پر حاصل کرنے اور اس کی ترسیل کرنے‘ کا الزام ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ REUTERS
Image caption دولت اسلامیہ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ دنیا بھر سے نوجوانوں کو اپنی جانب سوشل میڈیا کے ذریعے راغب کرنے کی کوششوں میں ہے

ذرائع کے مطابق متحدہ عرب امارات کے حکام نے ان کے فیس بک پر انقلابی مواد دیکھا ہے۔

اطلاعات کے مطابق وطن واپس بھیجے جانے والے ان چار افراد کا آن لائن پر ایک 10 افراد کے نیٹ ورک سے تعلق تھا جس کا ایک رکن ایک 20 سالہ لڑکا ہے اور جس کا تعلق کیرالہ سے ہے اور وہ پولیس کے مطابق اپریل میں راس الخیمہ سے غائب ہو گیا تھا۔

اس سے قبل ستمبر کے اوائل میں تین افراد کو متحدہ عرب امارات سے واپس بھیجا گیا گیا تھا۔

’دا ہندو‘ نے وزارت داخلہ کے ایک اہلکار کے بیان کے حوالے سے لکھا ہے کہ ’یہ تمام افراد 19 سال سے 24 سال کی عمر کے درمیان ہیں اور یہ کیرالہ میں رہنے والے لوگوں کی دوسری نسل ہیں اور یہ موبائل کی مرمت کرنے اور سم کارڈ بیچنے جیسے چھوٹے موٹے کام کرتے تھے۔‘

متحدہ عرب امارات نے مئی سے اب تک کم از کم آٹھ نوجوانوں کو دولت اسلامیہ کے ساتھ مبینہ تعلق کے لیے بھارت واپس بھیجا ہے۔

اسی بارے میں