افغانستان میں امریکی فوجی طیارے کے حادثے میں 11 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption عام طور پر سی ون تھرٹی فوجی دستوں اور بھاری سامان کی ترسیل کے لیے استعمال ہوتا ہے

امریکی فوج کے مطابق افغانستان کے ہوائی اڈے پر سی ون تھرٹی طیارہ گرنے سے کم ازکم 11 افراد ہلاک ہو گئے ہیں جن میں چھ فوجی شامل ہیں۔

سی ون تھرٹی طیارہ جسے ہرکولیس کہا جاتا ہے مقامی وقت کے مطابق شام سات بجکر 30 منٹ پر جلال آباد ایئرپورٹ پر حادثے کا شکار ہوا۔

اے ایف پی سے گفتگو میں امریکی کرنل برائن ٹرابس نے بتایا کہ ہلاک ہونے والوں میں سے چھ افراد امریکی فوج کے لیے کام کرتے تھے جبکہ دیگر سول کنٹریکٹر تھے۔

خیال رہے کہ عام طور پر سی ون تھرٹی فوجی دستوں اور بھاری سامان کی ترسیل کے لیے استعمال ہوتا ہے۔

سال کے آغاز پر فوجوں کے انخلا کا منصوبہ بدل دیا گیا تھا اس جس کے باعث اس وقت بھی افغانستان میں 10 ہزار امریکی فوجی موجود ہیں۔

امریکی صدر نے سنہ 2016 کے آخر تک افغانستان سے بہت کم فوج کی واپسی کی منظوری دی ہے۔

نیٹو کے مطابق افغانستان کے مشرق میں جہاں سی ون تھڑی کو حادثہ پیش آیا غیر ملکی افواج کی کل تعداد ایک ہزار ہے۔جو 40 ہزار افغان دستوں کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔

اس سے قبل جولائی میں ایک ملائشین سی ون تھرٹی طیارہ رہائشی علاقے میں گرنے سے 140 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

اسی بارے میں