کیرالہ: بھارت میں مذہبی رواداری کی مثال

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption تھریسور ضلع میں قدیم موزیری بندرگاہ کے نواح میں واقع ہندوستان کا پہلا گرجا گھر

انڈیا میں عدم رواداری بھلے ہی بڑھ رہی ہو لیکن جنوبی ریاست کیرالہ میں آج بھی مذہبی اور ثقافتی تنوع کی قدیم روایت برقرار ہے۔

یہاں جگہ جگہ مسجدیں، گرجا گھر اور سناگوگ نظر آتے ہیں، ایک دوسرے کے قریب، باہمی بقا کی ایک مثال۔

یہ علاقہ ہزاروں سال سے سمندر کے راستے مسالوں کی تجارت کا اہم مرکز رہا ہے جس کی جھلک جگہ جگہ نظر آتی ہے۔

بھارت میں عدم رواداری کے بڑھتے ہوئے رجحان نے اتنی تشویش ناک شکل اختیار کر لی ہے کہ 40 سے زیادہ ممتاز ادیبوں نے ملک کے سرکردہ ادبی ادارے ’ساہیتہ اکیڈمی‘ کو اپنے اعزازات واپس کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

لیکن اس کے برعکس کیرالہ میں مذہبی اور ثقافتی تنوع کا جشن منایا جاتا ہے۔ وہاں ہندوؤں کی اکثریت ہے اور عیسائیوں اور مسلمانوں کی بھی بڑی آبادی ہے لیکن کبھی مذہبی تشدد کے واقعات پیش نہیں آتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption کوچین شہر کے بیچوں بیچ ہندو راجہ کے پرانے محل سے بالکل متصل ایک سناگوگ ہے جو 11ویں صدی میں تعمیر ہوا

وہ مالابار کا ہی خوبصورت ساحل تھا جہاں سے یہودیوں، عیسائیوں اور مسلمانوں نے صدیوں پہلے ہندوستان میں قدم رکھا تھا۔

تھریسور ضلعے میں قدیم موزیری بندرگاہ کے نواح میں ہندوستان کا پہلا گرجا گھر، سناگوگ (یہودیوں کی عبادت گاہ) اور پہلی مسجد واقع ہیں۔

کہا جاتا ہے کہ تقریباً دو ہزار سال پہلے یہودی اور عیسائی مالابار پہنچے تھے۔ موزیری بندرگاہ کے قریب واقع سینٹ ٹامس گرجا گھر کے پادری فادر جوز فرینک کہتے ہیں کہ دور دراز سے آنے والوں کا مقامی لوگوں نے ہمیشہ کھلے دل سے استقبال کیا۔

ان کا کہنا ہے کہ ’اگر آپ مجھ سے پوچھیں کہ تمام بڑے مذاہب پہلے یہاں ہی کیوں آئے، تو پہلی بات یہ کہ یہاں بڑی بندرگاہ واقع ہونے کی وجہ سے آنا آسان تھا، اور اس لیے بھی کہ مقامی لوگوں نے کھلے دل سے ان کا استقبال کیا۔ یہ علاقہ ہزاروں سال سے کاروبار کا ایک بڑا مرکز تھا۔‘

کوچین شہر کے بیچوں بیچ ہندو راجہ کے پرانے محل سے بالکل متصل ایک سناگوگ ہے۔ راجہ نے نہ صرف یہودیوں کا استقبال کیا بلکہ انھیں ’جیو ٹاؤن‘ بسانے کے لیے اپنے ہی محل کے بالکل برابر میں جگہ بھی دی۔

یہاں پہلے عرب تاجر آئے، پھر یہودی اور عیسائی، اور پھر اسلام۔ نئی تہذیبیں بھی آئیں اور نئے نظریات بھی، لیکن مقامی مورخین کے مطابق طویل عرصے تک باہر کی دنیا کے ساتھ کاروباری تعلق کی وجہ سے معاشرے میں رواداری شاید اتنی رچ بس چکی تھی کہ کبھی تہذیبوں کا ٹکراؤ نہیں ہوا۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption شمالی پراوور میں واقع سینٹ ٹامس چرچ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ 52 عیسوی میں تعمیر ہوا تھا

کوچین کے سابق میئر کے جے سوہن کہتے ہیں کہ ’چونکہ یہ ایک ساحلی علاقہ ہے اس لیے یہاں دنیا بھر سے لوگ آتے رہے ہیں۔ کاروبار بڑھانے کے لیے ہمیشہ ان کا استقبال بھی کیا گیا۔ اس میں راجہ کا بھی فائدہ تھا، اس لیے انھوں نے بھی باہر سے آنے والوں کا گرمجوشی سے استقبال کیا۔ یہاں سب کو اپنے مذہب کی تبلیغ کرنے کی آزادی تھی، اور اب لوگوں کو یہ بھی احساس ہے کہ وہ ایک دوسرے کےبغیر ترقی نہیں کر سکتے۔‘

کیرالہ ملک کی واحد ریاست ہے جہاں آج بھی مسلم لیگ ایک بڑی سیاسی جماعت ہے اور کانگریس ریاستی حکومت میں شامل ہے۔

مسلم لیگ کے رہنما محمد اشرف کہتے ہیں کہ ’مسلم لیگ مرکزی دھارے (مین سٹریم) کی پارٹی ہے، ہماری پارٹی کے نظریات اور پالیسیاں بالکل سیکیولر ہیں، ہم سب کے لیے کام کرتے ہیں اور اسی لیے ہماری مقبولیت میں اضافہ ہو رہا ہے، میں خود ایک ایسے حلقے سے کامیاب ہو تا ہوں جہاں مسلمان اکثریت میں نہیں ہیں۔‘

کیرالہ کی اس خوبصورت روایت میں شاید باقی ملک کے لیے بھی ایک پیغام ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption کوچین کی ایک دیوار پر بنی ہوئی یہ پینٹنگ یہاں کی مذہبی ہم آہنگی کی تصویر ہے

اسی بارے میں