’افغانستان میں نوجوان خاتون سنگسار‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ واقعہ صوبہ غور کے دارالحکومت فیروز کوہ کے نواح میں پیش آیا

افغان حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے وسطی علاقے میں ایک نوجوان خاتون کو غیر ازدواجی تعلقات رکھنے کے الزام میں پتھر مار کر ہلاک کر دیا گیا ہے۔

یہ واقعہ صوبہ غور کے دارالحکومت فیروز کوہ کے نواح میں پیش آیا۔

ہجوم کے ہاتھوں خاتون ہلاک

30 سیکنڈ دورانیے کی ایک آن لائن ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک خاتون کو ایک میدان میں موجود گڑھے میں کھڑا کیا گیا ہے اور وہاں موجود چند مرد اس پر پتھر برسا رہے ہیں۔

نوجوان خاتون کا نام رخسانہ تھا اور اس کی عمر 19 سے 21 سال کے درمیان تھی۔

طلوع نیوز ایجنسی کے مطابق لڑکی کی ہلاکت کا یہ واقعہ ایک ہفتے قبل طالبان کے زیرِ قبضہ علاقے میں پیش آی۔

یہ ویڈیو ریڈیو فری یورپ کی جانب سے ریلیز کی گئی ہے اور بتایا گیا ہے کہ اسے وہاں موجود ہجوم نے فلمایا ہے۔

ریڈیو فری یورپ کے مطابق نوجوان خاتون اور اس کا ساتھی مبینہ طور پر اپنے گھر سے بھاگ رہے تھے تاکہ شادی کر سکیں۔

صوبائی حکام نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ رخسانہ کو طالبان کے مقامی مذہبی رہنماؤں اور مسلح جنگجوؤں کی موجودگی میں سنگسار کیا گیا۔

صوبائی گورنر سیما جوئندا کے مطابق رخسانہ کے خاندان والوں نے اس کی شادی اس کی مرضی کے خلاف کر دی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ رخسانہ کو سنگسار کیا گیا جبکہ ان کے ساتھ بھاگنے والے مرد کو کوڑے مارے گئے۔

خاتون پر الزام ہے کہ اسے اپنے دوست کے ساتھ شادی سے قبل جنسی تعلقات قائم کرنے کی بنا پر پکڑا گیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ علاقے میں رواں سال میں یہ پہلا واقعہ ہے مگر آخری نہیں۔‘

سیما جوئندا نے کہا کہ ’ملک بھر میں خواتین مشکلات کا شکار ہیں لیکن غور میں ماحول اور رویے انتہائی قدامت پسندانہ ہیں۔‘

اسی بارے میں