مادام تساد کے مومی مجسمے اب دہلی میں

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شائقین نے سب سے پہلے امیتابھ بچن کا مومی پتلا دیکھنے کی خواہش ظاہر کی تھی

مومی مجسموں کے لیے دنیا بھر میں مشہور برطانوی عجائب گھر مادام تساد نے بھارت کے دارالحکومت نئی دہلی میں اپنی شاخ کھولنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ عجائب گھر چلانے والی کمپنی مارلن انٹرٹینمنٹ کا کہنا ہے کہ یہ عجائب گھر سنہ 2017 کے ابتدائی مہینوں میں عوام کے لیے کھولا جائے گا۔

کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر نک وارن نے کہا ’اس بات سے ہمیں بہت خوشی ہے کہ ایشیا کا سب سے پہلا مادام تساد بھارت میں کھل رہا ہے ۔‘

مادام تساد میں مادھوری کا مجسمہ

مادام تساد میں موم کی قطرینہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایشوریہ رائے کا موم کا پتلا عجائب گھر آنے والے شائقین میں بہت مقبول رہا ہے

انھوں نے مزید کہا ’لندن کے مادام تساد میں پہلے سے موجود بالی وڈ کے ستاروں کے مومی پتلے وہاں کی سب سے پرکشش چیز ہیں۔‘

خیال رہے کہ لندن کے مادام تساد میوزیئم میں بالی وڈ ستاروں کی گیلری دیکھنے صرف بھارتی شہری ہی نہیں بلکہ جنوبی ایشیائی ممالک کے سیاح بھی بڑی تعداد میں آتے ہیں۔

عام طور پر پہلے مادام تساد میوزیم میں مغربی ممالک کے سٹارز ہی نظر آتے تھے لیکن سنہ 2000 میں پہلی دفعہ امیتابھ بچن کا مجسمہ رکھے جانے کے بعد وہاں بالی وڈ کے سٹارز کی موجودگی بھی محسوس کی جانے لگی۔

ان کے بعد گذشتہ 15 سالوں میں شاہ رخ خان، سلمان خان، رتیک روشن، کرینہ کپور، ایشوریہ رائے جیسے بھارتی ستاروں کے پتلے مادام تساد میوزیم کی زینت بن چکے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اداکارہ کترینہ کیف کا مومی مجسمہ رواں برس مارچ میں نمائش کے لیے پیش کیا گیا

اس فہرست میں تازہ ترین اضافہ اداکارہ کترینہ کیف کے مومی مجسمے کا تھا جو رواں برس مارچ میں نمائش کے لیے پیش کیا گیا تھا۔

موم کا مجسمہ بنانے میں فنکاروں کی بہت محنت کرنی پڑتی ہے۔ ہر مشہور شخصیت کے ساتھ آرٹسٹ تقریباً دو گھنٹے گزارتے ہیں جس میں 500 مختلف قسم کی پیمائشیں لی جاتی ہیں۔

ایک ہی جیسی نظر آنے والی شبیہ کا مجسمہ بنانے میں تقریباً چار ماہ درکار ہوتے ہیں اور کئی ستارے اپنے مجسموں کے لیے اپنے اصلی لباس فراہم کرتے ہیں۔

اسی بارے میں