’مودی کا گاندھی سے کبھی موازنہ نہیں کیا‘

تصویر کے کاپی رائٹ ALAMY
Image caption سات منٹ طویل اس ویڈیو میں نریندر مودی کی تعریف کی گئی ہے

بھارتی سینسر بورڈ کے سربراہ پہلاج نہالانی نے اپنے میوزک ویڈیو پر ہونے والی تنقید کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے وہ تو صرف مستقبل کے بھارت کا تصور کر رہے تھے۔

پہلاج نہالانی پر الزام ہے کہ انھوں نے ویڈیو میں وزیر اعظم نریندر مودی کا مہماتما گاندھی سے موازنہ کیا ہے تاہم انھوں نے اس کی تردید کی ہے۔

سات منٹ طویل اس ویڈیو میں نریندر مودی کی تعریف کی گئی ہے۔ ویڈیو میں کہا گیا ہے کہ بھارت مودی کی قیادت میں ترقی کر رہا ہے۔

اس ویڈیو میں کچھ پرجوش نوجوان بھارتی جھنڈا اٹھائے ’میرا ملک ہے عظیم‘ گیت گا رہے ہیں۔

دوسری جانب اس ویڈیو پر تنقید بھی جاری ہے اور سوشل میڈیا پر اس کا خوب مذاق اڑایا جا رہا ہے۔ وجہ یہ ہے کہ اس ویڈیو میں بات تو ’میک ان انڈیا‘ کی ہو رہی ہے لیکن شاٹس روس، ماسکو اور فرانس کے ہیں۔

پہلاج نہالانی نے بی بی سی ہندی کو بتایا: ’میں نے نریندر مودی اور مہاتما گاندھی کا موازنہ نہیں کیا۔ صاف بھارت کا خواب باپو کا تھا جو مودی مکمل کر رہے ہیں اور میں ویڈیو میں کہہ رہا ہوں، ہمیں اسے مل جل کر پورا کرنا ہے۔ میں کوئی موازنہ نہیں کر رہا ہوں۔ یہ ان لوگوں کی سوچ ہے جو ملک کی ترقی ہوتے نہیں دیکھنا چاہتے۔‘

بھارتی سینسر بورڈ کے سربراہ کی اس ویڈیو میں اونچی عمارتیں، جدید موٹر وے اور سپیس شٹلز کے ساتھ ساتھ بھارت کو ترقی کرتا ہوا بھی دکھایا گیا ہے۔

اسی بارے میں