بھارتی زیرِ انتظام کشمیر کے وزیراعلیٰ کے لیے محبوبہ مفتی نامزد

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption 50 سالہ محبوبہ مفتی گذشتہ 20 سال سے کشمیر کی مقامی سیاست میں سرگرم ہیں

بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں حکمران جماعت پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کے ارکانِ اسمبلی نے گورنر این این ووہرا کو ایک خط کے ذریعے بتایا ہے کہ وہ محبوبہ مفتی کو نیا وزیر اعلیٰ بنانا چاہتے ہیں۔

کشمیر کے وزیر اعلیٰ مفتی محمد سعید کا جمعرات کی صبح انتقال ہو گیا تھا جس کے بعد پی ڈی پی کے ارکان اسمبلی نے ان کی بیٹی محبوبہ مفتی کو اپنی نئی رہنما منتخب کیا ہے۔

خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق پی ڈی پی کے ایک رہنما کا کہنا ہے کہ پارٹی کے ایک وفد نے سری نگر میں گورنر این این ووہرا سے اس سلسلے میں ملاقات کی ہے۔

56 سالہ محبوبہ مفتی فی الحال لوک سبھا کی رکن ہیں۔ وہ کشمیر کے وزیر اعلیٰ کے طور پر کب حلف اٹھائیں گی، اس بارے میں پی ڈی پی نے کوئی حتمی تاریخ نہیں بتائی ہے۔

مفتی محمد سعید کے انتقال کے بعد جموں کشمیر میں 7 دن کے سرکاری سوگ کا اعلان کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کشمیر کے وزیر اعلیٰ مفتی محمد سعید کا جمعرات کی صبح انتقال ہو گیا تھا

واضح رہے کشمیر کی قانون ساز اسمبلی کا بجٹ اجلاس 18 جنوری سے شروع ہورہا ہے اور اس سے قبل نئے وزیراعلیٰ کی حلف برداری ایک آئینی مجبوری ہے۔

50 سالہ محبوبہ گذشتہ 20 سال سے کشمیر کی مقامی سیاست میں سرگرم ہیں اور اگر وہ وزیراعلیٰ کے عہدے پر فائز ہو جاتی ہیں تو گذشتہ 40 سال میں کشمیر کی پہلی خاتون وزیراعلیٰ ہوں گی۔

ریاست میں پی ڈی پی اور بی جے پی کی مخلوط حکومت ہے۔ 87 رکنی اسمبلی میں پی ڈی پی کے 28 جبکہ بی جے پی کے 25 ممبران اسمبلی ہیں۔

تاہم ابھی پی ڈی پی کی اتحادی بے جے پی نے اس حوالے سے کوئی واضح موقف اختیار نہیں کیا ہے۔

اسی بارے میں