’مودی اور داؤد ابراہیم کی ملاقات نواز شریف کے گھر پر ہوئی‘

Image caption اعظم خان شعلہ بیان مقرر کہے جاتے ہیں

بھارت کی اہم ریاست اترپردیش کی حکومت کے سینیئر وزیر اعظم خان نے دعویٰ کیا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے اپنے پاکستان دورے میں مافیا ڈان داؤد ابراہیم سے ملاقات کی تھی۔

بھارتی خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق انھوں نے کہا: ’وزیر اعظم نے بین الاقوامی قوانین کو توڑتے ہوئے اچانک پاکستان کا دورہ کیا۔ وہ وہاں داؤد سے بھی ملے۔ انھیں اس سے انکار کرنے دیجیے۔ میں ثبوت دوں گا کہ وہ دروازوں کے پیچھے کس کس سے ملے؟‘

اعظم خان کا دعویٰ ہے کہ 25 دسمبر کو جب مودی پاکستان گئے تو وہاں وہ نواز شریف، ان کے خاندان سے ملے اور اس موقعے پر نواز شریف کے گھر میں داؤد بھی موجود تھے۔

خیال رہے کہ مافیا ڈان داؤد ابراہیم بہت سے الزامات میں بھارت کو مطلوب ہیں اور ان کے خلاف بین الاقوامی وارنٹ بھی جاری ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption اعظم خان ملایم سنگھ یادو کے بہت قریب کہے جاتے ہیں

مرکزی حکومت کے ایک ترجمان نے جہاں اعظم خان کے بیان کو ’بے بنیاد‘ کہا ہے۔ بی جے پی نے اترپردیش کے وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو سے اعظم خان کو فوری طور پر برطرف کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

اعظم خان ریاست اتر پردیش کی سیاست میں اہم حیثیت کے حامل ہیں اور سابق وزیر اعلیٰ ملایم سنگھ یادو کے بہت قریب تصور کیے جاتے ہیں۔ وہ مبینہ طور پر متنازع بیانات کے لیے شہ سرخیوں میں رہتے ہیں۔

خبر رساں ایجنسی اے این آئی کے مطابق، حکومت کے ترجمان فرانک نورنہا نے اعظم خان کے بیانات کو ’مکمل طور پر بے بنیاد‘ قرار دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption 25 دسمبر کو بھارتی وزیر اعظم نے اچانک لاہور کا دورہ کیا تھا

وہیں بی جے پی کے ترجمان سدھانشو متل کا کہنا ہے کہ ’وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو کو اعظم خان کو فوری طور پر برخاست کر دینا چاہیے۔‘

دریں اثنا کانگریس پارٹی کے ایک ترجمان ٹام وڈككن کا کہنا ہے کہ ’اعظم خان ایک عرصے سے عوامی زندگی میں ہیں اور بغیر ٹھوس شواہد کے انھوں نے ایسا بیان نہیں دیا ہوگا۔‘

اسی بارے میں