دہلی میں پانی کی فراہمی جزوی طور پر بحال

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption پیر کو پانی میں کمی کے سبب سکول بند کر دیے گئے تھے

بھارتی دارالحکومت دہلی میں پانی کی فراہمی جزوی طور پر بحال ہو گئی ہے اور دہلی کو پانی فراہم کرنے والی اہم نہر پر مرمت کا کام جاری ہے۔

خیال رہے کہ دہلی سے ملحق ریاست ہریانہ میں سرکاری نوکریوں میں ریزرویشن کے مطالبے پر جاری جاٹ برادری کے مظاہروں کے دوران دہلی کو پانی سپلائی کرنے والی نہر کو بند کر دیا گیا تھا۔ لیکن پیر کو فوج نے نہر پر کنٹرول حاصل کر لیا۔

دہلی میں پانی کے وزیر کپل مشرا نے کہا کہ ابھی بھی بحران ختم نہیں ہوا ہے اور لوگوں سے پانی کو احتیاط سے استعمال کرنے کی ترغیب دی ہے۔

اس بحران کے سبب پیر کو تمام سکولوں میں تعطیل کا اعلان کر دیا گيا تھا لیکن آج سکول کھل گئے ہیں۔

ایک تخمینے کے مطابق دہلی میں تقریباً پونے دو کروڑ افراد رہتے ہیں اور 60 فی صد پانی مونک نہر سے سپلائی ہوتا ہے اور یہ نہر ہریانہ سے گزرتی ہوئی دہلی پہنچتی ہے۔

کپل مشرا نے منگل کی صبح ایک ٹویٹ میں کہا کہ ’نہر میں کچھ پانی چھوڑا گیا ہے جس سے شمالی اور مغربی دہلی کے بعض علاقوں میں پانی کی فراہمی کی گئی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Delhi Water
Image caption دہلی کو پانی سپلائی کرنے والی نہر کو احتجاج کے دوران نقصان پہنچایا گیا تھا

انھوں نے کہا کہ اس علاقے سے 70 ٹینکرز کو مغربی علاقے کے لیے روانہ کیا گیا ہے جہاں شام تک پانی کی فراہمی بحال کر دیے جانے کی امید ہے۔

بہرحال انھوں نے کہا کہ ’پانی کی فراہمی اس وقت تک متاثر رہے گي جب تک کہ مونک نہر پر مرمت کا کام پورا نہیں ہو جاتا۔ بحران ابھی ختم نہیں ہوا ہے۔ لوگ پانی احتیاط سے استعمال کریں۔‘

تین دنوں تک جاری رہنے والے احتجاج میں کم از کم 18 افراد ہلاک اور سینکڑوں زخمی ہو گئے ہیں۔

مظاہرین کی جانب سے توڑ پھوڑ کے واقعے کے بعد فوج نے روہتک اور جھججر میں گولیاں چلائیں۔

اسی بارے میں