ایرانی الیکشن میں پولنگ کے وقت میں دو بار اضافہ

Image caption ایران کے جوہری پروگرام پر عالمی طاقتوں کے ساتھ ہونے والے معاہدے کے بعد ملک میں یہ پہلے انتخابات ہیں

ایران میں جمعے کو ہونے والے انتخابات میں پولنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی کے عمل کا آغاز ہوگیا ہے۔

ایران کے جوہری پروگرام پر عالمی طاقتوں کے ساتھ ہونے والے معاہدے کے بعد ہونے والے پہلے انتخابات میں ایرانی عوام نے ملک کی پارلیمان کے ارکان کے علاوہ رہبرِ اعلیٰ کا انتخاب کرنے والے ماہرین کی اسمبلی ’مجلسِ رہبری‘ کے ارکان کا انتخاب کیا ہے۔

ان انتخابات میں تقریباً ساڑھے پانچ کروڑ ایرانی ووٹ ڈالنے کے مجاز تھے اور ملک بھر میں ووٹروں کے رش کی وجہ سے پولنگ کا وقت دو بار بڑھانا پڑا اور اس میں مجموعی طور پر تین گھنٹے کی توسیع کی گئی۔

حکام نے پہلی مرتبہ مقررہ وقت میں دو گھنٹے کا اضافہ کیا تھا جس کے بعد مزید پولنگ کا عمل مزید ایک گھنٹے کے لیے بڑھایا گیا۔

ایرانی پارلیمنٹ کی 290 نشتسوں کے لیے ہونے والے انتخابات میں 6200 امیدوار میدان میں تھے جن میں 586 خواتین بھی شامل ہیں تاہم 88 رکنی مجلسِ رہبری کے لیے کسی خاتون امیدوار نے الیکشن میں حصہ نہیں لیا۔

ابتدائی طور پر انتخابات میں شرکت کے لیے 12 ہزار افراد نے اندراج کرایا تھا تاہم بہت سے امیدواروں کو نااہل قرار دے دیا گیا جن میں اکثریت سابق ارکانِ پارلیمان اور اصلاح پسند امیدواروں کی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption پارلیمنٹ کی 290 نشتسوں کے لیے انتخابات میں چھ ہزار دو سو امیدوار میدان میں ہیں جس میں 586 خواتین بھی شامل ہیں

دارالحکومت تہران میں 30 نشستوں پر ایک ہزار امیدوار مدمقابل آئے۔

ایران میں امیدواروں کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت مذہبی رہنماؤں اور قانونی ماہرین پر مشتمل شورائے نگہبان دیتی ہے اور یہ شوریٰ ملک کے رہبر اعلیٰ آیت اللہ خامنہ ای کے قریب ہے۔

اس شوریٰ کی جانب سے کئی اصلاحات پسند رہنماؤں کو نااہل قرار دیا گیا جن میں اسلامی جمہوریہ ایران کے بانی آیت اللہ خمینی کے پوتے حسن خمینی بھی شامل ہیں۔

گذشتہ ماہ ایران کے صدر حسن روحانی نے بھی شورائے نگہبان پر زور دیا تھا کہ وہ اصلاح پسند امیدواروں کی زیادہ تعداد کو حصہ لینے کی اجازت دے۔

اصلاح پسند اور اعتدال پسند رہنماؤں نے، جو صدر حسن روحانی کے حامی ہیں، ان انتخابات کے لیے امید کی فہرست کے نام سے ایک اتحاد قائم کیا ہے جس کا مقصد پارلیمان اور اسمبلی میں سخت گیر ارکان کو کم کرنا ہے۔

پارلیمانی انتخابات کے تحت 290 ارکان پارلیمان کو چار برس کے لیے منتخب کیا جائےگا جبکہ رائے دہندگان نے مجلسِ رہبری کے لیے 88 علما کا انتخاب کیا ہے جن کے رکنیت کی معیاد آٹھ برس کے لیے ہوتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اصلاح پسند اور اعتدال پسندوں کا کہنا ہے کہ وہ ملک میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے پر توجہ دے رہے ہیں جس سے روزگار بڑھنے کے امکانات پیدا ہوں گے

بی بی سی کی فارسی سروس کے علی ہمدانی کا کہنا ہے کہ انتخابی مہم میں ملک کی معیشت ایک اہم موضوع رہا ہے۔

ان کے مطابق عالمی پابندیوں کے ہٹنے سے سرمایہ کاروں کی ایران میں واپسی سے معاشی حالات بہتر ہونے کی توقع ہے اور اس سے لوگوں کی زندگی بھی بہتر ہوگی۔

اصلاح پسند اور اعتدال پسندوں کا کہنا ہے کہ وہ ملک میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے پر توجہ دے رہے ہیں جس سے روزگار بڑھنے کے امکانات پیدا ہوں گے۔

ایران کی نصف سے زائد آبادی 35 برس سے کم عمر کی ہے لیکن نوجوانوں میں بے روزگاری کی شرح 25 فیصد ہے۔

لیکن قدامت پسند خیالات کے حامیوں کا کہنا ہے کہ معاشی ترقی اندرونی طور پر پیداوار بڑھانے سے ہوگی۔

اسی بارے میں