زبردستی بھارت ماتا نہ کہلوائیں: موہن بھاگوت

تصویر کے کاپی رائٹ Waris Pathan FB
Image caption وارث پٹھان کہتے ہیں کہ وہ اپنے بیان پر قائم ہیں: ’بھاگوت جی کے بیان سے صاف ہے کہ اس معاملے پر ہمارا موقف صحیح ہے‘

’پتہ نہیں یہ اب یو ٹرن کیوں مار رہے ہیں۔‘ یہ ردعمل مہاراشٹر میں آل انڈیا مجلس اتحاد مسلمين کے رکن اسمبلی وارث پٹھان کا ہے جنھیں ’بھارت ماتا کی جے‘ نہ کہنے پر حالیہ اسمبلی سیشن سے معطل کر دیا گیا تھا۔

گذشتہ روز سخت گیر ہندو نواز تنظیم راشٹریہ سویم سنگھ (آرایس ایس) کے سربراہ موہن بھاگوت نے کہا تھا کہ ’بھارت ماتا کی جے‘ کسی سے زبردستی کہلوانے کی ضرورت نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ انڈیا کو ایک ایسا ملک بنایا جائے جہاں لوگ خود ہی بھارت ماتا کی جے کہیں اور انھیں زبردستی بلوانے کی ضرورت نہ پڑے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption پٹھان کو معطل کرنے کے لیے اسمبلی میں تمام سیاسی پارٹیاں متحد ہو گئی تھیں

وارث پٹھان کہتے ہیں کہ وہ اپنے بیان پر قائم ہیں۔ ’بھاگوت جی کے بیان سے صاف ہے کہ اس معاملے پر ہمارا موقف صحیح ہے۔‘

پٹھان کو معطل کرنے کے لیے اسمبلی میں تمام سیاسی پارٹیاں متحد ہو گئی تھیں۔ وہ کہتے ہیں ’یہ سب پارٹیاں ایک جیسی ہیں۔ موقع پڑنے پر تمام یو ٹرن مارتی ہیں۔‘

اس سے قبل موہن بھاگوت نے اپنے ایک بیان میں اس بات کی وکالت کی تھی کہ جب الوطنی کے اظہار کے لیے تمام شہریوں کو ’بھارت ماتا کی جے‘ کہنا چاہیے۔

اسی بیان کے بعد بھارتیہ جنتا پارٹی، کانگریس پارٹی، راشٹريہ کانگریس پارٹی اور شیو سینا جیسی تمام پارٹیوں نے پٹھان کو اسمبلی سے معطل کرانے کی سفارش کی تھی۔

بھارتیہ جنتا پارٹی کے ترجمان مادھو بھنڈاری نے بھاگوت کے تازہ بیان پر صفائی دیتے ہوئے کہا کہ ’آر ایس ایس کے سربراہ نے کوئی یو ٹرن نہیں لیا، ان کا بیان واضح ہے کہ ہر بھارتی کو خود سے بھارت ماتا کی جے کہنا چاہیے۔ یہ آواز اس کے دل سے نكلني چاہیے۔ زبردستی کرنے کی ضرورت ہی نہیں پڑے گی۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption آرایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت نے کہا تھا کہ ’بھارت ماتا کی جے‘ کسی سے زبردستی کہلوانے کی ضرورت نہیں ہے

اس سے قبل آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت نے صلاح دی تھی کہ ملک میں حب الوطنی کو بڑھانے کے لیے اس نعرے کی ضرورت ہے، جسے مسترد کرتے ہوئے اسدالدین اویسی نے گذشتہ روز کہا تھا کہ وہ ’بھارت ماتا کی جے‘ نہیں کہیں گے، چاہے ان کی گردن پر چاقو بھی رکھ دیا جائے۔

انڈیا میں ان دنوں حب الوطنی پرگرما گرم بحث جاری ہے اور ہر کوئی وطن پرستی کی تعریف و تشریح میں لگا ہوا ہے اور ’بھارت ماتا کی جے‘ کہنا وطن پرستی کی علامت بن گيا ہے۔

اسی سلسلے میں آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے رکن اسمبلی وارث پٹھان کو اسمبلی سے معطل کر دیا گیا تھا۔

اسی بارے میں