بھارت امریکہ سے40 جاسوس ڈرونز خریدنے کا خواہاں

تصویر کے کاپی رائٹ US air force
Image caption امریکہ بھارت کے ساتھ دفاع معاہدہ کرنا چاہتا ہے جس کہ تحت دونوں ممالک ایک دوسرے کے فوجی اڈے استعمال کر سکیں گے

بھارتی حکومت نے جاسوسی کے لیے استعمال ہونے والے ’پریڈیٹر سرویلینس ڈرونز‘ خریدنے کے لیے امریکی انتظامیہ سے رابطہ کیا ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹر کے مطابق بھارت امریکہ ایسے 40 ڈورنز خریدنا چاہتا ہے اور اس سلسلے میں دونوں ممالک میں بات چیت ہو رہی ہے۔

بھارت پاکستان اور چین کے ساتھ سرحدی علاقوں پر نظر رکھنے یہ ڈونز خریدنا چاہتا ہے۔

بھارت مسلح ڈرونز خریدنے میں بھی دلچسپی رکھتا ہے اور اگر ایسا ہوا تو اس کی مسلح فضائی صلاحیتوں میں خاطر خواہ اضافہ ہوگا۔

خیال رہے کہ کشمیر کے متنازع علاقے کی جاسوسی کرنے کے لیے بھارت نے پہلے ہی اسرائیل سے جاسوسی کرنے والے ڈونز خرید رکھے ہیں۔

امریکہ اور بھارت کے مابین دفاعی تعاون میں اضافہ ہو رہا ہے اور بھارت کی جانب سے ان ڈرونز کے خریدنے کی خواہش کو اسی سلسلے کی کڑی کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

پریڈیٹر سرویلینس ڈرونز بنانے والی امریکی کمپنی کے چیف ایگزیکٹو ویویک لعل کا خبر رساں ادارے روئٹر سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ’ ہم اس بات سے آگاہ ہیں کہ بھارتی حکومت ان ڈرونز کو خریدنے میں دلچسپی رکھتی ہے تاہم یہ معاملات حکومتی سطح پر طے ہوتے ہیں۔‘

خیال رہے کہ امریکی حکومت نے گذشتہ برس ایسے ڈرونز بھارت کو بیچنے کی اجازت دے دی تھی۔ تاہم ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ سرویلینس ڈرونز بھارت کو کب مہیا کیے جائیں گے۔

امریکی وزیرِ دفاع ایش کارٹر رواں ہفتے بھارت کا دورہ کر رہے ہیں۔ بھارتی فوجی حکام کے مطابق امریکی وزیرِ دفاع سے بھارت کو مسلح ڈرونز فراہم کرنے کا معاملہ بھی اٹھایا جائےگا۔

یاد رہے کہ امریکہ بھارت کے ساتھ دفاعی معاہدہ کرنا چاہتا ہے جس کہ تحت دونوں ممالک ایک دوسرے کے فوجی اڈے استعمال کر سکیں گے۔

اسی بارے میں