ایرانی ماڈل جوڑا ایران چھوڑ کر دبئی چلا گیا

تصویر کے کاپی رائٹ Other

ایران میں ماڈلنگ کے لیے مشہور جوڑے کی تصاویر انٹرنیٹ پر شائع ہونے کے بعد ان کو ایران چھوڑنا پڑا۔

الناز گل رخ اور ان کے ساتھی حامد فدئی ایران میں انسٹاگرام پر ان کی شائع ہونے والی تصاویر کے لیے بہت مشہور ہیں۔ گل رخ اپنی تصاویر میں سر پر سکارف نہیں لیتیں جو کہ ایران میں انقلاب کے بعد سے لازمی ہے۔

یہ جوڑا ایران چھوڑ کر دبئی چلا گیا ہے جہاں سے وہ اپنی تصاویر انسٹاگرام پر اپ لوڈ کر رہے ہیں۔ ان کے انسٹاگرام پر ساڑھے آٹھ لاکھ فالوورز ہیں۔

یاد رہے کہ ایران کی سائیبر کرائم عدالت نے حال ہی میں غیر اسلامی سمجھی جانے والی آن لائن ماڈلنگ کرنے کے الزام میں آٹھ افراد کو گرفتار کیا ہے۔

یہ گرفتاریاں اس آپریشن کا حصہ سمجھی جا رہی ہیں جس میں ان خواتین کو ٹارگٹ کیا جاتا ہے جو انسٹا گرام اور دیگر سوشل ویب سائٹس پر سر پر سکارف لیے بغیر تصاویر لگاتی ہیں۔

انسٹاگرام پر گل رخ نے کہا ہے کہ وہ ان افراد میں شامل نہیں تھیں جن کو ایرانی حکومت نے گرفتار یا متنبہ کیا ہو۔ ’نہ تو میں ضمانت پر رہا ہو کر ایران سے نکلی ہوں نہ ہی میں حراست میں لی گئی۔‘

جنوری میں انھوں نے انسٹاگرام پر پوسٹ میں لکھا ’بدقسمتی سے میں کچھ عرصے کے لیے ایران میں کام نہیں کروں گی لیکن میں اپنا کام ایران سے باہر جاری رکھوں گی۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Other

ایک اور پوسٹ میں ان کا کہنا ہے کہ وہ ایران واپس آنا چاہتی ہیں اور جدید بین الاقوامی سروسز اور کاسمیٹک صنعت ایران لانا چاہتی ہوں۔

ایران کی سائبر کرائم عدالت کی جانب سے گرفتار کیے گئے آٹھ افراد میں الہم عرب سامل ہیں جو شادیوں کی تصاویر بنانے کے لیے مشہور ہیں۔

ان سے عدالت نے ریاستی ٹی وی پر سوالات پوچھے اور پوچھا کہ وہ اس صنعت میں کیوں داخل ہوئیں۔

سر پر سکارف لیے الہم نے معافی مانگی اور کہا کہ وہ غلط کر رہی تھیں۔

اسی بارے میں