تین افراد کے شکار کے بعد 13 شیر پنجرے میں بند

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

انڈیا کی ریاست گجرات میں محکمۂ جنگلات کے حکام نے شیروں کے حملے میں ایک نوجوان سمیت تین افراد کی موت کے بعد 13 شیروں کو جنگل سے پکڑ کر پنجرے میں بند کر دیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ایسے حملے کبھی کبھار ہی دیکھنے میں آتے ہیں۔

٭ بھارت میں ’شیر شماری‘

٭ آدم خور شیر پکڑ لیا گیا

گجرات کے جنگلات کے چیف فورسٹ جے اے خان کے مطابق ان شیروں کو مک کے مشرقی حصے سے پکڑا گیا۔

انھوں نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا، ’جن شیروں نے لوگوں پر حملہ کیا ہے، ان کی جانچ کی جائے گی، باقی شیروں کو بعد میں جنگل میں چھوڑ دیا جائے گا۔‘

انھوں نے کہا کہ ان شیروں کے پاخانوں کا تجزیہ کر کے اس بات کا پتہ لگایا جائے گا کہ کن شیروں نے لوگوں پر حملہ کیا ہے۔

شیروں نے گذشتہ جمعہ کو عام کے باغ کے پاس بنے اپنے گھر کے باہر سو رہے ایک 14 سال کے نوجوانوں پر حملہ کر دیا تھا۔ کشور کو بچانے کی کوشش میں ان كے والد بھی زخمی ہو گئے تھے۔

اپریل میں شیروں نے کھیت میں سوتی ہوئی ایک 50 برس کی خاتون کی جان لے لی تھی اور ایک ماہ پہلے ایک سال 60 سال کے شخص کا شکار کیا تھا۔

گجرات کے جنگلوں میں 500 سے زیادہ شیر ہیں۔

اسی بارے میں