’چابہار سے گوادر کی بندرگاہ متاثر ہو گی‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption بھارت ایرانی تیل کا ایک بڑا خریدار رہا ہے

بھارت کے وزیراعظم نریندر مودی کے ایران کے دو روزہ دورے کے پہلے دن دونوں ممالک نے مختلف شعبوں میں 12 معاہدے کیے ہیں جن میں خطے میں کے لیے سیاسی طور پر سب سے اہم چابہار کی بندرگاہ کی تعمیر کا منصوبہ ہے۔

ایران اور بھارت کے درمیان تعلقات بالخصوص معیشت میں حالیہ برسوں میں زیادہ گرمجوشی نہیں پائی جاتی تھی اور اس کی خاص وجہ ایران پر امریکی پابندیوں کے دباؤ کی وجہ سے یہاں غیر ملکی سرمایہ کاری میں ہونے والی کمی تھی۔

تاہم بھارتی وزیراعظم نریندر مودی ایک ایسے وقت ایران کے دورے پر پہنچے ہیں جب ایران سے غیر معمولی پابندیاں ہٹائی جا چکی ہیں اور وہاں غیر ملکی سرمایہ کاری کے لیے ایک نیا ماحول بن چکا ہے اور اس منظر میں ایرانی تیل کا پرانا اور بڑا خریدار بھارت داخل ہوا ہے۔

ایران بھارت کے تعلقات کو دونوں کے امریکہ اور پاکستان کے درمیان تعلقات کے سیاق و سباق کے تناظر میں دیکھنا چاہیے۔

پاکستان کا روایتی حریف بھارت امریکہ کے قریب ہو رہا ہے جبکہ ایران کے امریکہ کے ساتھ براہ راست تعلقات نہیں ہیں اور اس کی پاکستان کے ساتھ سرحد ملتی ہے اور اس سے اچھے تعلقات ہیں۔ اس تناظر میں افغانستان اور چین کے ایران اور بھارت سے تعلقات اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔

سال 2008 میں بھارت اور امریکہ کے درمیان سویلین جوہری معاہدے پر دستخط کے بعد دونوں ممالک قریب آئے ہیں اور اس کے اچھے خاصے اثرات دہلی اور تہران کے تعلقات پر مرتب ہوئے۔

حقیقت میں یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ سنہ 2009 میں بھارت نے امریکہ کے براہ راست دباؤ کے نتیجے میں جوہری توانائی کے عالمی ادارے میں ایران کے خلاف ووٹ دیا۔

ایران کو بھارت کے اس موقف کی توقع نہیں تھی اگرچہ بھارتی حکام اس رائے پر قائم رہے کہ ان کا اقدام اچھی نیت سے اٹھایا گیا تھا۔

ایران اور مغربی ممالک جوہری سرگرمیوں پر اختلافات کو حل کر چکے ہیں اور اس کے نتیجے میں ایران پر سے پابندیاں ختم کی گئی ہیں۔

امریکہ بحیرۂ ہند میں بھارت کا زیادہ سے زیادہ کردار کا خواہاں ہے خاص کر چین کے مقابلے میں اور اس کے ساتھ افغانستان سمیت جنوبی اور مغربی ایشیا میں۔

حقیقت میں یہ عنصر بھارت کے پاکستان اور چین کے ساتھ تعلقات اور ان ممالک کے درمیان باہمی تعلقات اور بھارت کے خلاف تعاون میں قابل ذکر کردار ادا کر رہا ہے۔

اس فریم ورک میں بھارت کی کوشش ہے کہ وہ پاکستان اور چین کو پیچھے دھکیل دے اور کسی حد تک دونوں کے تعلقات بلخصوص معاشی شعبے میں کمزور یا بے اثر کر دے۔ وزیراعظم مودی کے دورہ ایران اور اس موقعے پر بھاری سرمایہ کاری اور تعاون کا اعلان اور افغانستان کے تناظر میں ایرانی بندر گاہ چابہار اہم بن گئی ہے۔

چابہار کی بندرگاہ پاکستان کی گوادر کی بندرگاہ سے تقریباً سو میل مغرب میں واقع ہے اور یہ بھارت کو افغانستان اور وسطی ایشیائی ریاستوں کے لیے سمندروں کے ذریعے تجارت کرنے کا متبادل راستہ فراہم کر سکتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption چا بہار بندر گاہ کی تعمیر سے پاکستانی بندرگاہ گوادر پر بھی اثرات مرتب ہوں گے

بحیرہ اومان کے دھانے پر موجود چابہار بندرگاہ پاکستان میں چین کے تعاون سے تیار کی جانے والے گوادر بندرگاہ سے زیادہ دور نہیں ہے۔

بھارت کو امید ہے کہ چابہار کی صورت میں اسے پاکستان کو بائی پاس کرتے ہوئے افغانستان اور وسطی ایشیا تک رسائی حاصل ہو جائے گا۔

بھارت کے وزیر ٹرانسپورٹ نے اسے شمال جنوب کی راہداری کہتے ہوئے کہا کہ اس راستے سے بھارت کو روس اور اس کے ساتھ یورپ تک رسائی حاصل ہو جائے گی۔

افغانستان کے پاکستان کے ساتھ تعلقات کئی وجوہات کی بنا پر مسائل سے دوچار ہیں اور اس کے پاکستان کے ساحلی شہر کراچی اور یہاں تک کہ گوادر سے ٹرانزٹ روٹ کے مقابلے میں چا بہار کا راستہ زیادہ محفوظ اور سستا ثابت ہو گا۔

چا بہار بندر گاہ کی تعمیر سے پاکستانی بندرگاہ گوادر پر بھی اثرات مرتب ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption چابہار کی بندرگاہ پاکستان کی گوادر کی بندرگاہ سے تقریباً سو میل مغرب میں واقع ہے

ایران کو بھی اس وقت بیرونی سرمایہ کاری کی ضرورت ہے اور بھارتی سرمایہ کاری اور تعاون کا بہت فائدہ ہو گا جس سے جوان افراد کے لیے ملازمتوں کے موقعے پیدا ہو گے۔

معاشی فوائد سے ہٹ کر وزیراعظم مودی کے اس دورے کے سیاسی اثرات بھی ہوں گے۔

بھارت کی آبادی میں مسلمانوں کی تعداد 15 کروڑ ہے جس میں لاکھوں شیعہ مسلمان ہیں اور یہاں سب مسلمان برابر ہیں اور بعض اعتبار سے ان کی تعداد کئی مسلمان ممالک سے بھی زیادہ ہے۔

قدرتی طور پر مسلمان شہری کئی مسائل پر اسلامی دنیا کی جانب دیکھتے ہیں اور اس میں بھارت کے مسلم ممالک کے ساتھ تعلقات کے ساتھ صحت مند اور صحت مندانہ تعلقات کو قائم رکھنا ضروری ہے۔

بھارتی وزیراعظم مودی اس سے پہلے سعودی عرب کا دورہ کر چکے ہیں اور اب اس میں توازن لانے کے لیے مودی کے شیعہ ایران کے دورے سے شیعہ آبادی کو ایران سے مضبوط تعلقات کے ذریعے ساتھ لے کر چلنا ہے۔

اسی بارے میں