اترا کھنڈ میں چار افراد ہلاک، سینکڑوں مکانات تودوں تلے

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption اترا کھنڈ میں بادل پھٹنے کے نتیجے میں سیلابی صورت حال پیدا ہو گئی ہے (فائل فوٹو)

انڈیا کی شمالی ریاست اترا کھنڈ میں شدید بارش کے دوران کئی جگہ بادل پھٹنے کے واقعات پیش آئے ہیں جن میں ابھی تک کی اطلاعات کے مطابق چار افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ کئی گاؤں مٹی کے تودے کی زد میں آ گئے ہیں۔

اترا کھنڈ سے صحافی شو جوشی نے بتایا ہے کہ بال گنگا وادی میں درجنوں ہندو زائرین پھنسے ہوئے ہیں۔

شو جوشی نے ہمارے نامہ نگار سے گفتگو کے دوران بتایا کہ رڑکی میں تین افراد مارے گئے ہیں جبکہ بال گنگا وادی میں ایک لڑکے کے ملبے کے نیچے دب جانے کی اطلاعات ہیں۔

خیال رہے کہ چند سال قبل اترا کھنڈ میں شدید بارش کے نتیجے میں ہزاروں جانیں چلی گئی تھیں جن میں بہت سے زائرین شامل تھے جو ہندوؤں کے مقدس مقام کیدار ناتھ کی زیارت کے لیے وہاں پہنچے تھے۔

Image caption بہت سے زائرین پھنسے ہوئے ہیں

بھارتی اخبار دا انڈین ایکسپریس کے مطابق ضلع مجسٹریٹ احمد اقبال نے بتایا: ’گھنسالی کے ایس ڈی ایم ونود کمار کو ایک پولیس ٹیم کے ساتھ علاقے کے دورے پر بھیجا گيا ہے۔‘

بادل پھٹنے کا واقعہ سنیچر کی سہ پہر کو پیش آیا جس میں کوٹھیار گاؤں کے درجنوں مکان ملبے کی زد میں آ گئے جبکہ 100 سے زیادہ مویشی بہہ گئے یا ملبے میں زندہ دب گئے۔

احمد اقبال نے کہا کہ بادل پھٹنے کا واقع چونکہ دن میں پیش آيا اس لیے بادل پھٹنے پر لوگ اپنی جان بچا کر بھاگنے میں کامیاب ہو گئے۔

اسی طرح کے بادل پھٹنے کے واقعات کرما اور سلیار گاؤں میں بھی پیش آئے جن میں سلیار گاؤں کی سڑک بہہ گئی، کئی کاریں اور موٹر سائکل بھی ملبے میں دب گئیں جبکہ کے گاؤں بھی ملبے کی زد میں آ گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption تین سال قبل آنے والے تباہ کن سیلاب میں ہزاروں افراد ہلاک ہوئے تھے

اطلاعات کے مطابق امبیدکر ہاسٹل کی دو منزلیں ملبے کے نیچے ہیں۔ کیرما میں تقریباً 20 گھر جبکہ سلیار میں تقریباً 50 گھر ٹنوں ملبے کے نیچے آ گئے ہیں۔

اقبال احمد نے بتایا کہ گیر گاؤں میں ایک سرکاری سکول بھی ملبے کی زد میں آ گيا ہے جبکہ گنگا نگر میں وسیع پیمانے پر رہائشی مکانات ملبے میں دب گئے ہیں۔

ایس ڈی ایم ونود کمار نے اخبار کو بتایا کہ ’گھنسالی سے اکھوری جانے والا راستہ شدید بارش کے سبب منقطع ہے اور چار دھام کی زیارت کرنے والوں کو محفوظ مقامات تک پہنچانے میں حائل ہے۔‘

اسی بارے میں