امتحانات میں پہلی پوزیشن، پھر فیل اور اب جیل

تصویر کے کاپی رائٹ PTI

انڈیا کی شمال مشرقی ریاست بہار میں انٹرمیڈیٹ امتحانات میں پہلی پوزیشن حاصل کرنے والی طالبہ کو نقل کے جرم میں جیل بھیج دیا گیا ہے۔

انٹرمیڈیٹ میں آرٹس گروپ میں 17 سالہ روبی رائے نے پہلی پوزیشن حاصل کی تھی تاہم ان کے ایک ویڈیو انٹرویو پر امتحانات میں نقل کا مسئلہ شدت اختیار کر گیا۔

ویڈیو میں روبی ٹھیک سے لفظ ’پولیٹیکل سائنس‘ بھی نہیں بولتی نظر آتیں اور جب ان سے اس کا مطلب پوچھا جاتا ہے تو وہ کہتی ہیں کہ یہ کھانا پکانے سے متعلق ہے۔

اس ویڈیو کے وائرل ہونے کے بعد روبی رائے کے امتحانی نتائج کو منسوخ کرتے ہوئے انھیں دوبارہ امتحان دینے کے لیے کہا گیا جس میں فیل ہو گئیں۔

روبی کو مقامی مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا گیا اور انھیں آٹھ جولائی تک جیل بھیج دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بھارت کی ریاست بہار میں امتحانات کے دوران نقل عام ہے

روبی رائے کو جیل بھیجنے کے فیصلے پر تنقید کی جا رہی ہے اور ناقدین کے مطابق روبی نابالغ ہیں اور انھیں بچوں کے مرکز میں بھیجا جانا چاہیے تھا۔

اخبار ہندوستان ٹائمز کے مطابق مقامی پولیس افسر ایس ایس پر منو مہاراج نے کہا ہے کہ روبی کو ثبوت دینا ہو گا کہ وہ نابالغ ہیں لیکن انھوں نے یہ نہیں بتایا کہ یہ ثبوت کیسے فراہم کرنا ہو گا۔

بہار کے ایک وزیر نے نامہ نگاروں کو بتایا ہے کہ حکام کو نظام ایسا بنانا چاہیے جس میں طالب علموں کو سزا دینے کی بجائے ان کا احتساب ہو۔

بہار میں امتحانات میں اچھی کارکردگی دکھانے والے متعدد طالب علموں کی گرفتاری کے وارنٹ جاری کیے گئے ہیں۔

ان میں سائنس گروپ میں پہلی پوزیشن حاصل کرنے والے سوربھ سریشٹھ بھی شامل ہیں جو ایک ویڈیو انٹرویو میں یہ بھی نہیں بتا پائے کہ پانی کا فارمولا ’ایچ 2 او‘ ہے۔

اسی بارے میں