ریپ کی شکار خاتون کے ساتھ سیلفی لینا مہنگا پڑ گیا

تصویر کے کاپی رائٹ Narayen Bareth
Image caption سمیہ گجرار نے جو کہ اب مستعفی ہو چکی ہیں، مسکراتے ہوئے اس خاتون کے ساتھ سیلفی بنائی تھی

انڈیا میں ریپ کا نشانہ بننے والی خاتون کے ساتھ سیلفی لینے پر نیشن کونسل آف وومن کی ایک اہلکار سمیا گجرار کو اپنے عہدے سے استعفی دینا پڑ گیا۔

وٹس ایپ پر سامنے آنے والی سلیفیاں اس وقت لی گئی تھیں جب راجھستان کمیشن فار وومن کی ممبران ریپ کی نشانہ بننے والی خاتون سے بدھ کے روز ملاقات کر رہی تھیں۔

اس خاتون نے رپورٹ دائر کی تھی کہ اس کے خاوند اور دو رشتہ داروں نے اسے مبینہ زیادتی کا نشانہ بنایا ہے۔ جب کہ 51 ہزار روپے جہیز نہ دینے پر اس کے ماتھے اور ہاتھوں پر تضحیک آمیز چیزیں بنائیں۔

سمیہ گجرار نے جو کہ اب مستعفی ہو چکی ہیں، مسکراتے ہوئے اس خاتون کے ساتھ سیلفی بنائی تھی۔

تصاویر میں گجرار کے ہاتھ میں ٹیبلٹ دیکھا جا سکتا ہے، جب کہ یہ بھی کہ کمیشن کی چئیر پرسن سمن شرما، ریپ کی شکار خاتون کا ہاتھ پکڑے دیکھی جا سکتی ہیں۔ شاید ایسا انھوں نے ان کے ہاتھ پر بنے تضحیک آمیز ’ٹیٹو‘ دکھانے کے لیے کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ twitter
Image caption ڈاکٹر ایس آر قریشی کا کہنا تھا کہ ریپ کا نشانہ بنانے والی خاتون سے سیلفی لینا اور وہ بپی مسکرا کر، بے حسی ہے اور اوپر سے اس عمل کا دفاع کرنا بھی۔
تصویر کے کاپی رائٹ twitter
Image caption سواتی مالیوال نے مس گجرار کے سیلفی لینے کے دفاع کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس طرح کا کام اور سوچ بے حسی اور بے مخلصی ہے۔

گجرار نے اپنی صفائی دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ خاتون کیمرے کے بارے میں جاننا چاہتی تھی اور سیلفی لینے کی وجہ یہ تھی کہ یہ خاتون ریلکس ہو جائے۔

لیکن اس خاتون کے ساتھ لی گئی سلفیوں نے انڈیا میں سوشل میڈیا پر کہرام برپا کر دیا۔ خصوصا اس لیے بھی کیونکہ انڈیا میں ریپ کا شکار بننے والے لوگوں کی نشاندہی کرنا ممنوع ہے۔

اس واقعے کے بعد احتجاج بڑھتے ہی مس گجرار نے اپنے عہدے سے استعفی دے دیا لیکن وہ پھر بھی سیلفی لینے کا دفاع کرتی رہیں۔

سرکاری اعدادوشمار کے مطابق انڈیا میں جنسی تشدد کے واقعات میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔ 2012 میں دہلی میں ایک سٹوڈنٹ کو زیادتی کے بعد قتل کرنے کے واقعے سے شدید احتجاج اور ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے نئے قوانین بنانے کے مطالبات سامنے آئے تھے۔ ’سیلفی ود ریپ سروائر‘ نامی ہیش ٹیگ کا استعمال کچھ لوگوں نے اس طرف توجہ دلانے کے لیے کیا کہ ریپ کا شکار خاتون کے ساتھ سیلفی لینا معاشرے میں موجود ایک بڑے مسئلے کی نشاندہی کرتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ twitter
Image caption انڈین اداکار سلمان خان کے فینز نے بھی اس واقعے کو بنیاد بنا کر وومن کمیشن پر تنقید کی۔