پاکستانی وزیرِاعظم کے خلاف انڈیا میں درخواست دائر

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عدالت نے یہ درخواست سماعت کے لیے منظور کر لی ہے اور اس معاملے پر دوبارہ سماعت 25 جولائی کو ہوگی

انڈیا کے شہر انبالہ میں عدالت نے پاکستان کے وزیرِ اعظم نواز شریف اور کشمیر کے علیحدگی پسند رہنماؤں کے خلاف اینٹی ٹیررسٹ فرنٹ انڈیا نامی تنظیم کی جانب سے دائر کی گئی درخواست سماعت کے لیے منظور کر لی ہے۔

اس تنظیم کے صدر ويریش شانڈليہ نے منگل کو انبالہ کی سی جی ایم کورٹ میں نواز شریف اور کشمیری رہنماؤں کے خلاف ملک سے غداری کی دفعات کے تحت درخواست دائر کی۔

٭ کشمیر میں ہلاکتوں کے خلاف پاکستان میں یومِ سیاہ

٭ کشمیر میں امن کے لیے حرّیت رہنماؤں کا فارمولا

اس پٹیشن میں کہا گیا ہے کہ ’انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں فوج کے ہاتھوں مارے جانے والے حزب المجاہدین کے شدت پسند برہان وانی کو شہید قرار دینا اور پاکستان میں اس سلسلے میں یومِ سیاہ منانا انڈیا کے خلاف کھلی جنگ ہے۔‘

درخواست میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ’پاکستانی وزیرِ اعظم کے اشارے پر علیحدگی پسند لیڈر یٰسین ملک، مير واعظ عمر فاروق، شبیر شاہ اور سید علی گیلانی کشمیر میں پاکستان کے پرچم لہرا رہے ہیں اور برہان وانی جیسے شدت پسندوں کا یوم شہادت منا كر کشمیریوں کو انڈیا کے خلاف بھڑکا رہے ہیں۔‘

عدالت نے یہ درخواست سماعت کے لیے منظور کر لی ہے اور اس معاملے پر دوبارہ سماعت 25 جولائی کو ہوگی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption انڈیا کے زیرِ انتظام کشمیر میں علیحدگی پسند رہنما برہان وانی کی ہلاکت کے بعد سے احتجاج میں اب تک 42 افراد مارے جا چکے ہیں

ويریش شانڈليہ نے بی بی سی ہندی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’کشمیر میں حریت لیڈر جہاں عام لوگوں کو اکسا رہے ہیں اور انڈین سکیورٹی فورسز پر حملے کروا رہے ہیں وہیں امرناتھ یاترا میں بھی رکاوٹ ڈالی جا رہی ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ ’ہم ان تمام عناصر اور ان کے خطرناک ارادوں کو سب کے سامنے لانا چاہتے ہیں۔‘

نواز شریف کے پاکستانی شہری ہونے کی وجہ سے مقدمہ کمزور ہونے سے متعلق سوال پر ويریش نے کہا کہ ’کشمیری علیحدگی پسند رہنما تو انڈیا میں ہی رہتے ہیں اور یہ تمام پاکستانی وزیر اعظم نواز شریف سے ملے ہوئے ہیں۔ اس صورتحال میں ان سب کو انھوں نے معاملے میں فریق بنایا ہے اور وہ اس معاملے کو آگے تک لے کر جائیں گے۔‘

خیال رہے کہ انڈیا کے زیرِ انتظام کشمیر میں علیحدگی پسند رہنما برہان وانی کی ہلاکت کے بعد سے شروع ہونے والے احتجاج میں اب تک 42 افراد مارے جا چکے ہیں۔

ان پرتشدد واقعات کی جہاں عالمی سطح پر مذمت کی گئی ہے وہیں پاکستان میں اس سلسلے میں کشمیریوں سے اظہارِ یکجہتی کے لیے بدھ کو سرکاری سطح پہ یومِ سیاہ منایا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں