نیپال اور انڈیا میں سیلاب، 30 سے زیادہ ہلاک

Image caption امدادی کارکن لوگوں کو بچانے کے لیے ربڑ کی کشتیاں اور ہیلی کاپٹرز کا استمعال کر رہے ہیں

نیپال میں حکام کا کہنا ہے کہ مسلسل بارشوں اور سیلاب کے باعث مٹی کے تودے گرنے سے کم سے کم 33 افراد ہلاک اور متعدد لاپتہ ہو گئے ہیں۔

نیپال میں مون سون کی بارشوں کے باعث سبھی دریاؤں میں تغیانی ہے اور لینڈ سلائیڈز کے باعث متعدد مکانات تباہ ہو گئے ہیں۔

خبر رساں ادرے اے ایف پی کے مطابق وزراتِ داخلہ کے ترجمان جھنکا ناتھ دھکل نے بتایا ’دارالحکومت کھٹمنڈو میں ایک سکول کی عمارت کے ایک حصے کے گرنے سے دو بچے ہلاک ہوئے۔ جبکہ پیر سے اب تک 33 افراد ہلاک اور 20 سے زائد لاپتہ ہو چکے ہیں۔‘

امدادی کارکن لوگوں کو بچانے کے لیے ربڑ کی کشتیاں اور ہیلی کاپٹرز کا استمعال کر رہے ہیں۔

انڈیا میں سیلاب

ادھر نیپال میں جاری مسلسل بارشوں کے باعث انڈیا کی ریاست بہار میں سیلابی صورتحال ہے اور حالات بدتر ہوتے جا رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ SEETU TIWARI
Image caption آٹھ اضلاع کے 1324 دیہاتوں کی تقریباً پانچ لاکھ کی آبادی سیلاب سے متاثر ہے

ریاست کے آٹھ اضلاع میں صورتحال انتہائی خراب ہے۔ بیشتر ندیوں میں تغیانی ہے۔

ڈیزاسٹر مینجمنٹ ڈیپارٹمنٹ کے جوائنٹ سکریٹری انرود کمار نے بتایا کہ سپول، ارریہ، کشن گنج، دربھنگہ سمیت آٹھ اضلاع کے 1324 دیہاتوں کی تقریباً پانچ لاکھ کی آبادی سیلاب سے متاثر ہے۔

سیلاب میں پھنسے لوگوں کے لیے امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔

تاہم سہرسہ سے مقامی صحافی پیوش نے بی بی سی ہندی کو بتایا کہ حکومت کے امدادی کام کی رفتار بہت سست ہے جبکہ حالات مسلسل قابو سے باہر ہوتے جا رہے ہیں۔

اسی اثنا میں گنڈک بیراج سے منگل کی رات 5.50 لاکھ کیوسک پانی چھوڑے جانے کی بھی اطلاع ملی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ SANJAY SONI
Image caption ریاست کے آٹھ اضلاع میں صورتحال انتہائی خراب ہے۔ بیشتر ندیوں میں تغیانی ہے

اسی بارے میں