مدھیہ پردیش میں سیلاب: وزیر اعلیٰ کی تصویر پر مزاح

تصویر کے کاپی رائٹ Abhishek Rai Akrant

اگر کوئی وزیر اعلیٰ اپنی ریاست کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کرتے ہیں اور لوگ ان کی تصاویر بناتے ہیں، تو اس میں ممکنہ طور پر کیا غلط ہو سکتا ہے؟

بہت کچھ ہو سکتا ہے اگر وزیر اعلیٰ ٹخنوں تک گہرے پانی میں نہ چلنے کا فیصلہ کریں۔

مدھیہ پردیش کے وزیر اعلیٰ شیو راج سنگھ چوہان کی کچھ ایسی ہی تصاویر انٹرنیٹ پر وائرل ہوگئیں، جن میں چند پولیس اہلکاروں نے وزیر اعلیٰ کو سیلابی پانی سے گزارنے کے لیے اٹھا رکھا ہے۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اس تصویر پر شدید غصے کے علاوہ اس پر مزاح بھی دیکھنے کو ملا۔

انڈیا کے کئی دریاؤں میں پانی کی سطح خطرناک حد تک بڑھ جانے کے بعد بہت سے علاقوں میں سیلاب آگیا۔ سیلاب کے نتیجے میں پیش آنے والے حادثات میں اطلاعات کے مطابق 17 افراد مدھیہ پردیش میں ہلاک ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Ankur Patel

مشرقی ریاست بہار کے درجن کے قریب اضلاع میں ’سیلابی صورتحال‘ کے باعث کم از کم 15 ہزار افراد کو ان کے گھروں سے نکال کر محفوظ مقامات پر منتقل کیا گیا ہے۔

ستمبر اور جون کے مہینے کے دوران مون سون بارشوں کے نتیجے میں انڈیا میں سیلاب آنا معمول کی بات ہے۔

شیو راج سنگھ چوہان نےبھی دیگر وزرا اعلیٰ کی طرح سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں امدادی کاموں کا جائزہ لینے کے لیے وہاں کا دورہ کیا، لیکن اس دورے کا اختتام بری شہرت کے ساتھ ہوا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Sunder Chand

وزیر اعلیٰ کے دفتر نے دی ہندوستان ٹائمز کو بتایا ہے کہ ’پولیس اہلکاروں نے وزیر اعلیٰ کو اس وقت اٹھانے کا فیصلہ کیا جب کیچڑ میں چلتے ہوئے کوئی سخت چیز ان کے پاؤں سے ٹکرائی۔‘

تاہم اس بیان کے بعد بھی ٹوئٹر پر وزیر اعلیٰ کی تصویر پر صارفین کی جانب سے مزاح اور رد عمل میں کمی نہیں آئی۔

بعض صارفین کا کہنا تھا کہ ’وزیر اعلیٰ کی اس تصویر نے تو فضائی جائزے کا مطلب تبدیل کر دیا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Ankur Patel
تصویر کے کاپی رائٹ ROSY

اسی بارے میں