سرحدی علاقوں میں میزائلوں کی تنصیب پر چین کو تشویش

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption انڈیا کا چین کی سرحد پر فوجی دستوں کو براہموس میزائلوں سے مسلح کرنے کا منصوبہ ہے

چین نے انڈیا کی جانب سے سرحدی علاقوں میں میزائل کی نصب کیے جانے پر خدشات کا اظہار کیا ہے۔

جمعرات کو چین کی وزارت دفاع نے انڈیا کی جانب سے چین سے ملحق متنازع سرحد پر جدید کروز میزائل نصب کرنے کے ردعمل میں کہا ہے کہ وہ امید کرتے ہیں کہ انڈیا علاقائی امن اور استحکام کی کوششوں پر توجہ دے گا نہ کہ اس کے برعکس۔

انڈین فوجی حکام کا کہنا ہے کہ ان کا چینی سرحد پر فوجی دستوں کو روس کی اشتراک سے تیار کردہ براہموس میزائل سے مسلح کرنے کا منصوبہ ہے۔ یہ اقدام فوجی اور سویلین انفراسٹرکچر کی صلاحیتوں کو بڑھانے کی جاری کوششوں کا حصہ ہے۔

خیال رہے کہ دونوں جوہری ہمسایہ طاقتوں کے درمیان عرصہ دراز سے کشیدگی کم کرنے کی جانب بڑھ رہی تھیں۔

دونوں ممالک کے سربرہان نے گذشتہ سال سرحدی کشیدگی کو کم کرنے کی کوششیں کی تھیں تاہم یہ تنازع تاحال حل طلب ہے۔

چین کی وزارت دفاع کے ترجمان وی چیان نے ماہانہ نیوز بریفنگ کے دوران کہا کہ سرحدی علاقے میں امن اور استحکام کے قیام کے بارے دونوں ممالک کے درمیان ’اہم اتفاق رائے‘ پایا جاتا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دونوں جوہری ہمسایہ طاقتوں کے درمیان سرحدی تنازعے پر عرصہ دراز سے کشیدگی پائی جاتی ہے

خیال رہے کہ چین ہمالیہ کے مشرقی سیکٹر میں نئی دہلی کے زیرانتظام 90 ہزار مربع کلومیٹر پر اپنا دعویٰ کرتا ہے جبکہ انڈیا کا کہنا ہے کہ مغرب میں چین نے انڈیا کے 38 ہزار مربع کلومیٹر پر مشتمل اکسائی چن کے علاقے پر قبضہ کر رکھا ہے۔

انڈین وزیراعظم نریندر مودی آئندہ ماہ چین میں جی 20 سربراہی اجلاس میں شرکت کے لیے جائیں گے جہاں ان کی چینی صدر شی جن پنگ سے ملاقات متوقع ہے۔

خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق مودی حکومت نے براہموس ایروسپیس کو میزائلوں کی فروخت پانچ ممالک کو بڑھانے کا حکم دیا ہے، جن میں ویت نام سرفہرست ہے۔

نریندر مودی چین جانے سے پہلے ویت نام کا دورہ کر رہے ہیں جو اس وقت بیجنگ کے ساتھ جنوبی بحیرۂ چین کے تنازعے میں الجھا ہوا ہے۔

اسی بارے میں