دہلی میں چکنگنیا کی وبا کا خوف!

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption یہ بخار مچھروں کے دن میں کاٹنے سے ہوتا ہے یہ مریضوں کو بہت لاغر اور کمزور بنا دیتا ہے

انڈیا کے دارالحکومت دہلی میں مچھروں کے کاٹنے سے منتقل ہونے والے وائرس چکنگنیا کی وبا پھیل رہی ہے اب تک اس کے ایک ہزار سے زیادہ کیسز سامنے آچکے ہیں۔

بی بی سی کی عائشہ پریرا نے دہلی میں اس وبا کے پھیلنے اور اس سے لوگوں میں پیدا ہونے والی تشویش کی وجہ جاننے کی کوشش کی ہے۔

٭ دہلی میں ڈینگی، حکومت کی ہسپتالوں کو کارروائی کی تنبیہ

مقامی میڈیا کے مطابق اس وائرس سے اب تک دس افراد ہلاک ہو چکے ہیں تاہم سرکاری طور پر اس کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

اگرچہ اس سے پیدا ہونے والی بیماری مہلک نہیں تاہم عالمی ادارۂ صحت ڈبلیو ایچ او کا کہنا ہے کہ معمر لوگوں میں اس سے موت واقع ہو سکتی ہے۔

انڈیا میں صحت کے وزیر جے پی نڈّا نے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ حکومت یہ جانچ کر رہی ہے کہ آيا اس وائرس سے موت بھی واقع ہو سکتی ہے کیونکہ بہت سے ہلاک ہونے والے گردے کی خرابی یا ہائی بلڈ پریشر کے مریض تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption چکنگنیا سے تیز بخار آتا ہے

مجموعی طور پر اس وائرس کا اثر مریضوں کو لاغر و کمزور بنانے کے طور پر سامنے آيا ہے۔

اخبار انڈین ایکسپریس کے مطابق اس وائرس کے سبب بہت سرکاری کام پس پشت پڑ گئے ہیں اور دوسری ریاستوں سے آنے والے مزدوروں کو واپس جانا پڑا ہے۔

چکنگنیا سے صحت پر بہت سے منفی اثرات رونما ہوتے ہیں۔ بخار کے ختم ہونے بعد بھی بہت سے لوگوں کو جوڑوں میں درد رہنے کی شکایت ہوئی۔

اخبار ٹائمز آف انڈیا نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ کس طرح ایک ہی گھر کے تمام 13 افراد اس کی زد میں آئے اور انھیں کیسی مشکلات کا سامنا رہا۔

یہ واضح نہیں کہ رواں سال دہلی اس قدر متاثر کیوں ہوا۔ بظاہر معمول سے زیادہ بارش اور کثیر تعداد میں تعمیری منصوبوں کے سبب کئی جگہوں پر پانی جمع ہوا اور مچھروں کے پیدا ہونے کے امکان بڑھے۔ اس کے علاوہ دہلی میں بہت سی کھلی نالیاں بھی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ہسپتالوں میں بخار کی زد میں آنے والے مریضوں کی بھیڑ لگي ہوئي ہے

مقامی حکومت کو میڈیا نے اس وبا کے پھیلنے پر اس کے ڈھیلے ڈھالے رویے کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ وزیر اعلی کیجریوال شہر میں نہیں ہیں اور صحت کے ریاستی وزیر کا یہ کہنے پر مذاق اڑایا جا رہا ہے کہ یہ میڈیا کا پیدا کردہ مسئلہ ہے۔

اس شورشرابے کے بعد حکومت نے مقامی حکام سے حالات پر تفصیلی رپورٹ طلب کی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں