کشمیر: انڈین فوج کے ہیڈ کوارٹر پر حملہ، 17 فوجی ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption گذشتہ 14 سال میں بھارتی فوج پر ہونے والا اپنی نوعیت کا یہ سب سے بڑا حملہ ہے

انڈیا کے زیرانتظام کشمیر شمالی قصبے اوڑی میں انڈین فوج کے ہیڈکوارٹر پر مسلح حملے میں 17 بھارتی فوجی مارے گئے ہیں۔

اتوار کی صبح شمالی کشمیر میں پاکستان اور انڈیا کے درمیان لائن آف کنٹرول کے قریب ضلع بارہ مولا کے قصبے اوڑی میں انڈین سیکیورٹی اہلکاروں اور حملہ آوروں کے درمیان تصادم پانچ گھنٹوں تک جاری رہا۔ انڈین فوج کا کہنا ہے کہ اس کارروائی میں چار مسلح حملہ آوروں کو ہلاک کیا گیا ہے۔

جموں میں مقیم بھارتی فوج کی شمالی کمان کے ترجمان نے حملے میں 17 فوجی اہلکاروں کے مارے جانے کی تصدیق کی ہے۔

گذشتہ 14 سال میں بھارتی فوج پر ہونے والا اپنی نوعیت کا یہ سب سے بڑا حملہ ہے اور بعض اطلاعات کے مطابق یہ اسے ایک فدائی حملہ قرار دیا جارہا ہے۔

٭ ’کشمیر کے لیے آزاد، منصفانہ بین الاقوامی مشن ضروری‘

٭ ’کشمیری خون گلیوں نالیوں میں بہہ رہا ہے‘

٭ ’پاکستان کو عالمی سطح پر تنہا کیا جانا چاہیے‘

حملے کے بعد پاکستان اور انڈیا کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشنز نے آپس میں رابطہ کیا، جس کے بعد انڈیا کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشنز لفٹیننٹ جنرل رنبیر سنگھ کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ چاروں شدت پسندوں کا تعلق جیش محمد سے تھا ۔ انھوں نےکہا کہ ’حملہ آروں کے پاس کچھ ایسی اشیا تھیں جن پر پاکستان کی مارکنگ تھی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’میں نے اپنے پاکستانی ہم منصب سے بات کی ہے اور انھیں انڈیا کی گہری تشویش سے آگاہ کر دیا ہے ۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption فوجی ترجمان نے بتایا کہ زخمی فوجیوں کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے سرینگر میں واقع فوجی ہسپتال منتقل کیا گیا

پاکستانی فوج کے شعبۂ تعلقات عامہ کی جانب سے جاری کردہ پیغام میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی ڈی جی ایم او نے بے بنیاد اور قبل از وقت الزامات کو مسترد کرتے ہوئے اپنے انڈین ہم منصب کو کہا کہ اگر ان کے پاس کوئی ایسے شواہد ہیں جن کی بنیاد پر کارروائی کی جا سکتی ہو فراہم کیے جائیں۔

آئی ایس پی آر کے بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ پاکستان کی جانب سے دراندازی کی اجازت نہیں کیونکہ لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری کے دونوں جانب سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات ہیں۔

اس سے قبل مقامی پولیس کا کہنا تھا کہ یہ حملہ سرینگر سے شمال کی جانب 105 کلومیٹر دُور واقع اوڑی قصبہ میں واقع بھارتی فوج کے برگیڈ ہیڈکوارٹر میں اتوار کی صبح ساڑھے پانچ بجے کیا گیا۔ واضح رہے اوڑی سے لائن آف کنٹرول صرف 20 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔

سرینگر میں تعینات فوج کی 15 ویں کور کے ترجمان کا الزام ہے کہ ’جدید ہتھیاروں سے لیس یہ حملہ آور چند روز پہلے ہی ایل او سی عبور کر کے بھارتی علاقے میں داخل ہوئے تھے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption انڈین خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق پولیس نے اسے ’مشتبہ فدائی‘ حملہ قرار دیا ہے

جوابی آپریشن میں شامل ایک فوجی افسر نے بتایا کہ شدت پسندوں نے برگیڈ ہیڈکوارٹر کے ایک آفس کمپلیکس میں داخل ہوتے ہی فائرنگ شروع کردی۔ شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کے لیے انڈین فوج کے پیرا کمانڈوز کو جنگی ہیلی کاپٹروں کے ذریعے جائے واردات پر اتارا گیا۔ ساڑھے پانچ گھنٹوں کے مسلح تصادم کے دوران مسلسل دھماکوں کی آوازیں سنائی دے رہی تھیں۔

فوجی ترجمان نے بتایا کہ زخمی فوجیوں کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے سرینگر میں واقع فوجی ہسپتال منتقل کیا گیا۔

اس حملے کے بعد نئی دلّی کی وزارت دفاع اور وزارت داخلہ نے ہنگامی اجلاس کا انعقاد کیا ہے۔ وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ نے اس حملے پیش نظر روس اور امریکہ کا دورہ منسوخ کردیا۔

بھارتی فوج کے سربراہ جنرل دلبیر سنگھ سہاگ بھی حالات کا جائزہ لینے کے لیے کشمیر پہنچ گئے ہیں۔ اس سے قبل کپوارہ، پونچھ اور جنوبی کشمیر کے بعض علاقوں میں فوجی اور نیم فوجی تنصیبات پر مسلح حملے ہوئے ہیں۔

انڈین خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق پولیس نے اسے ’مشتبہ فدائی‘ حملہ قرار دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کشمیر میں تقریبا ڈھائی ماہ سے کشیدگی کی لہر جاری ہے جس میں 85 سے زیادہ افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی ہوئے ہیں

خیال رہے کہ آٹھ جولائی کو مشتبہ کشمیری شدت پسند برہان وانی کی سکیورٹی فورسز کے ساتھ تصادم میں موت کے بعد سے کشمیر وادی میں صورتحال کشیدہ ہے۔ مظاہرین کے خلاف فورسز کی کاروائیوں میں اب تک 85 سے زیادہ افراد مارے گئے ہیں، جن میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں۔ زخمیوں کی تعداد بارہ ہزار سے تجاوز کرچکی ہے۔ حکومت کا کہنا ہے پتھراؤ کی وجہ سے ساڑھے پانچ ہزار فورسز اہلکار بھی زخمی ہیں۔

اوڑی میں مسلح حملے کے بعد پورے بارہ مولا ضلع میں فوج نے تلاشی مہم شروع کردی ہے۔ فوج کو شبہہ ہے کہ ضلع میں مزید شدت پسند موجود ہیں جو فوجی تنصیبات پر حملوں کی منصوبہ بندی کررہے ہیں۔

دوسال قبل اسی ضلعے میں موہرا کے مقام پر شدت پسندوں نے حملہ کیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں