BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Thursday, 14 September, 2006, 10:47 GMT 15:47 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
’مشرف کے بیان پر افسوس ہے‘
 
صدر پرویز مشرف نے گزشتہ دنوں افغانستان کا دورہ کیا تھا
افغانستان نے پاکستان کے صدر پرویز مشرف کے طالبان سے متعلق ایک بیان پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔

گزشتہ دنوں یورپی پارلیمان سے خطاب کے دوران صدر پرویز مشرف نے کہا تھا کہ افغانستان میں امن اور سلامتی کے لیئے فی الوقت طالبان القاعدہ سے زیادہ خطرناک ہے۔

دوسری طرف پاکستانی دفترِ خارجہ نے کہا ہے کہ افغان وزارتِ خارجہ کی جانب سے صدر مشرف کے الفاظ کو غلط انداز سے پیش کیا گیا ہے۔

دفترِ خارجہ کی ترجمان تسنیم اسلم کے مطابق صدر مشرف نے شمالی وزیرستان میں ہونے والے حالیہ امن معاہدے کا دکر کرتے ہوئے اپنی تقریر میں کسی بھی جگہ پختونوں کو طالبان کا حصہ نہیں کہا۔

اس سے پہلے افغانستان کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ پختون کو طالبان کا حصہ سمجھنا پختونوں کے لیئے ہتک آمیز بات ہے کیونکہ انہوں نے افغانستان میں امن و امان کی بحالی میں بڑا اہم کردار ادا کیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ افغانستان صدر پرویز مشرف کے اس بیان پر افسوس کا اظہار کرتا ہے جس میں انہوں نے ایک قاتل گروہ کو سرحد کے دونوں طرف رہنے والی ایک قوم سے منسوب کیا ہے۔

پرویز مشرف نے کہا تھا کہ القاعدہ کے برعکس طالبان کو زیادہ عوامی حمایت حاصل ہے جو قومی سطح پر ٹکراؤ کا سبب بن سکتا ہے۔

ان کا کہنا تھاکہ طالبان کوافغانستان کے عوام میں کافی حمایت حاصل ہے جس کی قیادت ملا عمر کے ہاتھ میں ہے۔انہوں نے کہا کہ ملا عمر نے کبھی پاکستان کا دورہ نہیں کیا۔ مشرف نے زور دے کر کہا کہ طالبان کو ختم کرنے کا واحد راستہ طاقت کا استعمال ہی ہے۔

 
 
اسی بارے میں
الزام لگانا بند کر دیں: مشرف
07 September, 2006 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد