BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 08 December, 2006, 09:56 GMT 14:56 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
انڈیا امریکہ ڈیل کو قانونی تحفظ
 
ناقدین کا خیال ہے کہ اس سے جوھری عدم پھیلاؤ کی کوششوں کو نقصان پہنچے گا
امریکی کانگریس کے مذاکراتکار ایک قانون بنانے پر متفق ہوگئے ہیں جس کے تحت امریکہ بھارت کو غیر دفاعی مقاصد کے لیے جوہری ایندھن برآمد کر سکے گا۔

مذکورہ بل کو قانون بنانے کے لیے کانگریس کے دونوں ایوانوں سے اس کی منظوری ضروری ہے۔ ایوان نمائندگان اس بل پر جمعہ کو غور کرے گا۔

امریکہ اور بھارت کے دمیان ہونے والی جوہری ڈیل کے تحت بھارت کو امریکی جوہری ٹیکنالوجی حاصل ہوگی اور اس کے بدلے میں امریکی ماہرین کو اجازت ہوگی کہ وہ بھارت کے غیر دفاعی ایندھن بنانے والے ری ایکٹروں کا معانہ کر سکیں۔

کچھ لوگ اس کو ایک تاریخی معاہدہ قرار دیتے ہیں لیکن ناقدین کا خیال ہے کہ اس سے جوہری عدم پھیلاؤ کی کوششوں کو نقصان پہنچے گا۔

قطع نظر ان تبصروں کے، ابھی تک امریکہ بھارت ڈیل کی تفصیلات منظر عام پر نہیں آئی ہیں۔

مجوزہ ڈیل سے بھارت کے ساتھ جوہری تعاون کے معاملہ پر امریکہ کی پالسیی یکسر بدل جائے گی
واشنگٹن میں بی بی سی کے نامہ نگار شاہزیب جیلانی کا کہنا ہے کہ اطلاعات کے مطابق قانون سازوں نے جوہری معاہدے کی زبان اور اس کی کچھ شرائط کو بھارتی حکومت کے تحفظات کی روشنی میں نرم کردیا ہے۔

نامہ نگار کے مطابق وہ قانون ساز جو نئے بل کے حق میں ہیں اور جنہیں وائٹ ہاؤس کی حمایت حاصل ہے، پر اعتماد ہیں کہ نیا ’مصالحانہ بل‘ بھارتی حکومت کے لیے قابل قبول ہوگا۔

ادھر بھارت کے دورے پر گئے ہوئے امریکی دفتر خارجہ کے سینیئر اہلکار نکولس برنز نے کہا ہے کہ انہیں توقع ہے کہ بل نہایت کامیاب ہوگا اور اس میں تقریباً وہ سب کچھ شامل ہوگا جس پر دونوں ممالک کے درمیان ڈیل ہوتے وقت اتفاق ہوا تھا۔

دلی سے بی بی سی کے نامہ نگار سنجوے مجمدر کے مطابق اس معاہدے کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ خود ہندوستان کے وزیر اعظم منموہن سنگھ نے اس معاہدے کی منظوری کے لیے آخری لمحات میں ذاتی طور پر کئی امریکی ارکان کانگریس سے حمایت کے لیے رابطہ قائم کیا تھا ۔

ہمارے نام نگار کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم منموہن سنگھ کی کوششوں کا بظاہر اچھا نتیجہ نکلا ہے اورمعاہدے کے حتمی دستاویز میں ہندوستان کی تشویش کا خیال رکھا گیا ہے ، وہ شق بھی نہیں شامل کی گئی ہے جس میں ہندوستان سے ایران کے جوہری پروگرام کے بارے میں سخت موقف اختیار کرنے کے لیے کہا گیا تھا۔ ہندوستان کا خیال ہے کہ ہند امریکہ جوہری معاہدہ بالواسطہ طور پر اسے ایک ایسی جوہری طاقت کے طور پر قبول کرنے کے مترادف ہے جو جوہری معاملات میں ذمے داری کے ساتھ پیش آتا ہے ۔

مجوزہ ڈیل سے بھارت کے ساتھ جوہری تعاون کے معاملہ پر امریکہ کی پالسیی یکسر بدل جائے گی کیونکہ امریکہ انڈیا کے ساتھ جوہری تعاون سے یہ کہہ کر انکار کرتا رہا ہے کہ اس نے جوہری عدم پھیلاؤ کے معاہدے پر دستخط نہیں کیے ہیں اور وہ دو مرتبہ جوہری ہتھیاروں کے ٹسیٹ بھی کر چکا ہے۔

 ناقدین کا کہنا ہے کہ ڈیل سے بھارت کے جوہری ہتھیاروں کے ذخیرے کو تقویت ملے گی اور اس سے ایران جیسے ممالک کو غلط پیغام ملے گا جن کی جوہری خواہشات کی امریکی مخالفت کرتا ہے۔
 

بھارت کے ساتھ جوہری تعاون کے معاہدے کو حتمی شکل صدر جارج بش نے اپنے اس سال مارچ کے تایخی دورے میں دی تھی جس کے بعد جون میں امریکی سینٹ اور ایوان نمائندگان کی کمیٹی نے بھی اس کی حمایت کر دی تھی۔

ڈیل کے تحت امریکہ کو بھارت کے توانائی پیدا کرنے والے ری ایکٹرز تک رسائی ہوگی لیکن جوہری ہتھیاروں کے لیے ایندھن بنانے والے ریئکٹرز امریکی رسائی سے باہر ہوں گے۔

ناقدین کا کہنا ہے کہ ڈیل سے بھارت کے جوہری ہتھیاروں کے ذخیرے کو تقویت ملے گی اور اس سے ایران جیسے ممالک کو غلط پیغام ملے گا جن کی جوہری خواہشات کی امریکی مخالفت کرتا ہے۔

انڈیا واضح کر چکا ہے کہ حتمی معاہدے میں اس پر یہ شرط بالکل نہیں ہونی چاہیے کہ وہ ایران کے بارے میں امریکی پالیسی کی حمایت کرے اور نہ ہی یہ کہے کہ ایران کو اپنا جوہری مواد تیار کرنے سے روکا جائے گا۔

اس معاہدے کو کانگریس کی منظوری ملنے کے بعد بھی کچھ رکاوٹ باقی رہے گی ۔ ہندوستان کو جوہری خریداری کے لۓ سازوسامان درآمد کرنے والے ملکوں یعنی نیوکلیر سپلائر گروپ سے معاہدے کی منظوری لینی پڑے گي۔ ہندوستان کے ساتھ جوہری تعاون کے لیے 45 ممالک اس گروپ کو اپنے قوانین میں ترمیم کرنی پڑے گی ۔

 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد