BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Saturday, 10 January, 2009, 11:07 GMT 16:07 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
غزہ میں بمباری، مصر میں مذاکرات
 
فلسطینیوں کے مطابق غزہ میں لگ بھگ آٹھ سو افراد مارے گئے ہیں

غزہ میں لڑائی کا تیسرا ہفتہ شروع ہوتے ہی اسرائیل نے اپنی بمباری جاری رکھی ہے۔ جمعہ کی شب اسرائیل نے چار فضائی حملے کیے جبکہ حماس کے شدت پسندوں نے دو میزائلوں سے اسرائیلی شہروں کو نشانہ بنایا۔

اسرائیل اور حماس دونوں نے ہی اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جانب سے فائربندی کی اپیل مسترد کردی ہے۔ تاہم سینیئر فلسطینی اہلکار مصر میں ہیں جہاں کو لڑائی کے خاتمے کے بارے میں مذاکرات کر رہے ہیں۔

غزہ میں طبی اہلکاروں کا کہنا ہے کہ دو ہفتے کی بمباری میں لگ بھگ آٹھ سو فلسطینی ہلاک ہوئے ہیں جبکہ اسرائیل کا کہنا ہے کہ تیرہ اسرائیلی بھی ہلاک ہوئے ہیں۔

امدادی آپریشنز دوبارہ بحال
 دریں اثناء غزہ میں اقوامِ متحدہ کے امدادی ادارے کی ایک ترجمان نے کہا ہے کہ اسرائیل کی طرف سے سلامتی اور تحفظ کی یقین دہانی کے بعد ادارہ اپنے امدادی آپریشنز دوبارہ بحال کر رہا ہے۔
 
اسرائیلی حکام کے مطابق سنیچر کی صبح اسرائیل کی بمباری میں حماس کی خفیہ سرنگوں اور ہتھیاروں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔ اسرائیل نے یہ بھی کہا ہے کہ اس کے فوجیوں اور غزہ میں موجود شدت پسندوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔

لیکن یروشلم میں بی بی سی کے نامہ نگار مائیک سرجنٹ کے مطابق غزہ سے ملنے والی اطلاعات سے لگتا ہے کہ اسرائیلی افواج ابھی گنجان آبادی والے علاقوں میں داخل نہیں ہورہی ہیں۔

اسرائیل نے غیرملکی صحافیوں کو غزہ کی پٹی میں جانے کی اجازت نہیں دی ہے۔

غزہ کے باشندوں کے مطابق سنیچر کی صبح اسرائیلی جنگی طیاروں نے خان یونس، بیت لاہیہ اور غزہ شہر کے اطراف میں عمارتوں اور مقامات پر حملے کیے جو استعمال میں نہیں تھے۔

اسرائیلی فوج کے مطابق سنیچر کو حماس نے چند راکٹ اسرائیل پر داغے لیکن کسی جانی یا مالی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔ جمعہ کو غزہ سے تیس سے زائد راکٹ اسرائیل میں داغے گئے۔

دریں اثناء اقوامِ متحدہ کی حقوقِ انسانی کی ہائی کمشنر ناوی پلے نے کہا ہے کہ اسرائیل کا ایک عمل ہی جنگی جرم کے زمرے میں آتا ہے۔ ہائی کمشنر نےیہ بات اس واقعہ کے تناظر میں کہی جس میں غزہ کے اندر زخمی فلسطینوں کو تحفظ دینے میں اسرائیلی فوج کی ناکامی ایک رپورٹ میں اجاگر کی گئی ہے۔

یہ رپورٹ ریڈ کراس کی طرف سے سامنے لائی گئی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ عالمی ادارے کے عملے کو زیتون کے قرب و جوار میں ایک گھر سے ایک ماں کی لاش کے پاس چار لاغر بچے ملے جو انتہائی سہمے ہوئے تھے۔

غزہ کے باشندے انسانی بحران کا شکار ہیں
ناوی پلے نےکہا: ’یہ واقعہ بہت کرب انگیز ہے کیونکہ اس میں وہ تمام عناصر پائے جاتے ہیں جن کو اگر یکجا کردیں تو یہ ایک جنگی جرم کہلائے گا۔ زخمیوں کا تفحظ ، بیماروں کا علاج اور انہیں محفوظ جگہ منتقل کرنا ایک ذمہ داری ہے لیکن ریڈ کراس کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوجی وہاں کھڑے دیکھتے رہے اور ان چار بچوں اور ایک بالغ کے لیے جو حرکت بھی نہیں کر سکتے تھے، انہوں نے کچھ بھی نہیں کیا۔‘

فائربندی سے متعلق اقوام متحدہ کی قرارداد کے بارے میں اسرائیل کے وزیرِ اعظم ایہود اولمرٹ نے کہا کہ اسرائیل پر ہونے والے راکٹ حملوں سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ قرارداد ’ناقابلِ عمل‘ ہے۔

حماس نے پہلے ہی اس قرارداد کو مسترد کر دیا تھا کیونکہ اس کا کہنا ہے کہ اس کو تیار کرنے کے عمل میں حماس کو شامل نہیں کیا گیا۔

غزہ میں حماس کے ترجمان سمعی ابو ظُہری کا کہنا تھا: ’حماس کا موقف یہ ہے کہ ہمیں اس قرارداد کی پروا نہیں کیونکہ حماس سے اس سلسلے میں کوئی مشاورت نہیں کی گئی حالانکہ وہ اس مسئلہ کا ایک اہم کردار ہے۔ اس کے علاوہ، قرارداد تیار کرتے وقت اس میں فلسطینی عوام کے مفادات پر غور نہیں کیا گیا، خاص کر وہ لوگ جو غزہ میں رہتے ہیں۔‘

دریں اثناء غزہ میں اقوامِ متحدہ کے امدادی ادارے کی ایک ترجمان نے کہا ہے کہ اسرائیل کی طرف سے سلامتی اور تحفظ کی یقین دہانی کے بعد ادارہ اپنے امدادی آپریشنز دوبارہ بحال کر رہا ہے۔

اقوامِ متحدہ کی ترجمان مشیل مونٹاس نے کہا ہے کہ اسرائیلی فوجی نے انہیں معتبر یقین دہانی کرائی کہ اقوامِ متحدہ کے اہلکاروں کی سلامتی، اس کی تنصیبات اور امدادی کاموں کا احترام کیا جائے گا۔

 
 
’لاشوں کے ٹکڑے‘
’میری بیوی، بیٹوں کی لاشیں گھر میں ہیں‘
 
 
قرارداد کا متن
غزہ فائربندی، سکیورٹی کونسل کی قرارداد
 
 
تباہی ہی تباہی
ایسے مناظر کے دل دہل جائے: ریڈ کراس
 
 
غزہ تیرہواں دن
غزہ،حملوں کا تیرہواں دن، تصاویر
 
 
حماس کی تباہی؟
حماس کی تباہی میں عربوں کی دلچسپی کیوں؟
 
 
غزہ اسرائیل کیا چاہتا ہے؟
حماس سے چھٹکارا یا انتخابات کی تیاری
 
 
اسرائیل چاہتا کیا ہے؟
فوجی کارروائی کے پیچھے اسرائیلی مقاصد کیا ہیں
 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد