امتحانی نتائج کی جانچ، عدالتی کمیشن قائم

پاکستان کے صوبۂ پنجاب میں چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ جسٹس اعجاز احمد چودھری نے صوبے میں انٹر میڈیٹ کے امتحانات کے نتائج میں مبینہ بے ضابطگی کی عدالتی تحقیقات کے لیے جوڈیشل کمیشن تشکیل دے دیا ہے۔

امتحانی نتائج میں بے ضابطگیوں کے خلاف صوبہ بھر کے طلبہ کا احتجاج گزشتہ ہفتے کو شدت احتیار کرگیا تھا اور صوبائی دارالحکومت سمیت پنجاب کے کئی شہروں میں طلبہ نے احتجاج کیا تھا۔

ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے یہ کمیشن حکومت پنجاب کی درخواست پر تشکیل دیا ہے۔ لاہور ہائی کورٹ کا ایک رکنی کمیشن جسٹس شاہد سعید پر مشتمل ہے اور یہ کمیشن ایک ماہ کے اندر اپنی تحقیقات مکمل کرکے اس کی رپورٹ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو بھجوائے گا۔

وزیر اعلیْ پنجاب شہباز شریف نےانٹرنیٹ پر غلط امتخانی نتائج کا نوٹس لیتے ہوئے اس عدالتی تحقیقات کرانے کا اعلان کیا تھا۔ اس سے پہلے طلبہ کے احتجاج میں شدت آنے کے بعد پنجاب کے وزیر تعلیم میاں مجتبٰیْ شجاع الرحمان نے نتائج کو منسوخ کردیا تھا اور اعلان کیا تھا کہ دو ماہ میں ازسر نو نتائج مرتب کیے جائیں گے۔