’توہینِ مذہب کی ملزمہ نابالغ ہے‘

آخری وقت اشاعت:  منگل 28 اگست 2012 ,‭ 10:28 GMT 15:28 PST

توہین مذہب کے الزام میں گرفتار عیسائی لڑکی رمشا کے وکیل کا کہنا ہے کہ طبی معائنے سے ثابت ہوگیا ہے کہ ان کی موکلہ کی عمر چودہ سال ہے تاہم ان کی ذہنی عمر ان کی طبعی عمر سے کہیں کم ہے۔

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد کے نواحی گاؤں سے تعلق رکھنے والی رمشا کو تقریباً دو ہفتے قبل مبینہ طور پر قرآنی آیات پر مبنی کاغذ جلانے پر توہینِ مذہب کے الزام میں حراست میں لیا گیا تھا اور پیر کو چار رکنی بورڈ نے ملزمہ کا طبی معائنہ کرنے کے علاوہ اُس کے مختلف ٹیسٹ بھی کیے تھے۔

رمشا کے وکیل طاہر نوید چوہدری نے بی بی سی کو بتایا کہ طبی معائنے اور تجزیوں کے بعد ڈاکٹر اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ رمشا نہ صرف نابالغ بچی ہے بلکہ اس کی ذہنی عمر اس کی اصل عمر سے کم ہے۔

ادھر اسلام آباد کی مقامی عدالت نے رمشا کی ضمانت کی درخواست کی سماعت تیس اگست تک کے لیے ملتوی کر دی ہے۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔