ملیشیا: وزیر اعلیٰ کے بیٹے کی شادی اور تحقیق

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 6 اکتوبر 2012 ,‭ 12:11 GMT 17:11 PST

ملیشیا میں انسداد بدعنوانی کا کمیشن ملاکا ریاست کے وزیر اعلیٰ کے بیٹے کی شادی پر ہونے والے اخراجات کی تفتیش کررہا ہے۔

حزب احتلاف کی جماعت نے مطالبہ کیا ہے کہ اس بات کی تفتیش کی جائے کہ آیا اس عالی شان شادی پر عوامی خزانے کو تو خرچ نہیں کیا گيا ہے۔

وزیر اعلی علیٰ رستم کے بیٹے کے شادی میں ایک لاکھ تیس ہزار افراد نے شرکت کی ہے اور شادی کی تقریب آٹھ گھنٹے تک جاری رہی ہے۔

اس عالی شان شادی کے اخراجات سے متعلق حزب اختلاف نے خدشہ ظاہر کیا ہے اور اس کے علاوہ ملیشیا کی عوام نے بھی سوشل نیٹورنگ سائٹس پر غصہ کا اظہار کیا ہے۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔