’اداروں کو حد میں رکھنا عدلیہ کی ذمہ داری‘

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 15 نومبر 2012 ,‭ 11:04 GMT 16:04 PST

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ کسی بھی ادارے کو اپنی آئینی حدود سے تجاوز نہ کرنے دے۔

جمعرات کو فُل کورٹ ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ عدالت اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ کوئی بھی ادارہ کسی دوسرے ادارے کے امور میں مداخلت نہ
کرے۔

اُنہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کو کسی بھی ایسے معاملے کا عدالتی نوٹس لینے کا اختیار ہے جہاں پر ائین کی خلاف ورزی ہو رہی ہو۔

یہ فُل کورٹ ریفرنس عدالت میں زیر سماعت مقدمات اور سپریم کورٹ کے انتظامی امور پر غور کرنے کے لیے طلب کیا گیا ہے۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ دوسرے اداروں کے لیے ایک رول ماڈل کی حیثیت اختیار کرتا جا رہا ہے اور اس ادارے پر لوگوں کا اعتماد بھی بڑھتا جارہا ہے۔

اس فُل کورٹ اجلاس میں چیف جسٹس سمیت چودہ ججز نے شرکت کی۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔