نکسل باغیوں کےخلاف مل کر لڑنا ہوگا:منموہن

بھارتی ریاست چھتیس گڑھ میں نکسل باغیوں کے حملے میں متعدد کانگریسی رہنماؤں سمیت 24 افراد کی ہلاکت کے بعد بھارت کے وزیراعظم منموہن سنگھ نے ایک مرتبہ پھر نکسلی تشدد کے خلاف سخت کارروائی کا عندیہ دیا ہے۔

اتوار کو کانگریس کی صدر سونیا گاندھی کے ہمراہ ریاستی دارالحکومت رائے پور میں اس حملے میں ہلاک ہونے والوں کے اہلخانہ اور زخمیوں سے ملاقات کے بعد بھارتی وزیراعظم نے کہا کہ نکسلی شدت پسندی کے خلاف لڑائی میں سختی لانا ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ جمہوریت کے لیے ایک تاریک دن ہے اور یہ جنگ سب کو مل کر لڑنی ہے۔ منموہن سنگھ نے یہ بھی کہا کہ ہماری پہلی ترجیح زخمیوں کو سب سے بہتر علاج مہیا کرنا ہے۔

انہوں نے مرنے والوں کے اہلِخانہ کے لیے وزیراعظم قومی مدد فنڈ سے پانچ لاکھ اور زخمیوں کے لیے 50 ہزار روپے فی کس امداد کا اعلان کیا ہے۔

اس سے قبل ٹوئٹر پر اپنے ایک پیغام میں انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ ’وحشیانہ حملے میں مارے گئے لوگ شہید ہیں۔‘

کانگریس کی صدر سونیا گاندھی نے اسے ’جمہوری اقدار پر حملہ قرار دیا ہے‘۔