دہشت گرد واقعات: فرسٹ ایڈ کی تربیت ضروری

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption سیٹیزن ایڈ کا مقصد ہنگامی امداد آنے سے پہلے لوگوں کی جانیں بچانا ہے

برطانیہ میں فوجی اور سویلین طبی عملے کی ایک سینیئر ٹیم نے ملک میں لوگوں کو دہشت گردی کے حملے کی صورت میں جان بچانے کے ہنر سیکھنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

لوگوں کو یہ سیکھنے کی ضرورت ہے کہ طبی عملے کے آنے سے پہلے ایک دوسرے کی مدد کس طرح کی جائے۔

ان کی ایپ 'سٹیزن ایڈ' میں قدم بہ قد مشورے دیے گئے ہیں۔

انسدادِ دہشت گرد پولیس نے اس منصوبے کی حمایت کی ہے۔ سکیورٹی ایجنسیوں کا کہنا ہے کہ برطانیہ میں دہشت گرد حملے کا قوی امکان ہے۔

اگرچہ کسی ایک فرد کا ایسے واقعے میں پھنس جانے کا امکان بہت کم ہے لیکن 'سٹیزن ایڈ' بنانے والے بریگیڈیئر ٹم ہوگیٹس اور پروفیسر سر کیتھ پورٹر کہتے ہیں کہ یہ ایک اچھا خیال ہے کہ لوگوں کے پاس ایک دوسرے کی مدد کرنے کے لیے کوئی پلان، علم اور ہنر ہو۔

تصویر کے کاپی رائٹ CITIZENAID
Image caption اس میں بتایا گیا ہے کہ ٹورنکی سے کس طرح خون روکنا ہے

ان کی ایپ، پاکٹ بک اور ویب سائٹ میں بتایا گیا ہے کہ بڑے پیمانے فائرنگ یا بم حملے کے فوراً بعد کس طرح زخموں سے نمٹا جائے۔

اس میں ہدایات دی گئی ہیں کہ کس طرح زیادہ خون کو بہنے سے روکنا ہے، جو کہ اس طرح کے حالات میں موت کی سب سے بڑی وجہ بنتا ہے۔

اس میں لوگوں کو بتایا گیا ہے کہ کس طرح زخم پر پیکنگ کی جاتی ہے،اس پر دباؤ ڈالا جاتا ہے اور اسے اوپر کی طرف اٹھا کر رکھا جاتا۔ اور مثال کے طور پر کس خون روکنے کے لیے طرح ٹورناکی استعمال کی جاتی ہے۔

اس پروگرام میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کس طرح یہ ترجیح دی جائے کہ کس زخمی کو پہلے مدد چاہیے اور ہنگامی امداد پہنچانے والے جب پہنچ جائیں تو انھیں کیا بتایا جائے۔

سیٹیزن ایڈ نے انسدادِ دہشت گردی کی پولیس کی دی ہوئی ہدایات کو ہی ذرا تفصیل سے آگے بڑھایا ہے۔

یہ ہدایات مندرجہ ذیل ہیں:

  • اگر ہو سکے تو واقعے کے وقت بھاگ جائیں
  • اگر بھاگ نہیں سکتے تو چھپ جائیں
  • ہنگامی سروسز کو بتائیں

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں