کینیڈا میں دیوقامت برفانی تودہ سیاحوں کی توجہ کا مرکز

Residents view the first iceberg of the season as it passes the South Shore, also known as "Iceberg Alley", near Ferryland Newfoundland, Canada April 16, 2017.

،تصویر کا ذریعہReuters

کینیڈا کا ایک چھوٹا قصبہ اچانک ہی سیاحوں کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے اور اس کی وجہ ساحل پر آنے والا ایک مہمان ہے جو کہ اس سیزن میں گلیشیئر سے ٹوٹ کر الگ ہونے والا برف کا پہلا بڑا ٹکڑا یا برفانی تودہ ہے۔

کینیڈا کے ٹی وی چینل سی بی سی نیوز کے مطابق یہ تودہ اختتام ہفتہ پر فیری لینڈ قصبے کے قریب جنوبی ساحلی پٹی پر پہنچا اور برف کے اس بڑے پہاڑ کو دیکھنے کے لیے بڑی تعداد میں فوٹو گرافر اور سیاحوں کے پہنچنے کی وجہ سے ٹریفک کے بہاؤ میں خلل پڑا۔

،تصویر کا ذریعہReuters

نیو فاؤنڈ لینڈ اور لیبراڈر کے ساحلی علاقے کو مقامی طور پر برفانی تودوں کی گزرگاہ کہا جاتا ہے اور اس کی وجہ قطب شمالی سے موسم بہار میں برف کے بڑے بڑے ٹکڑوں کا ٹوٹ کا آنا ہے۔

مقامی میئر ایڈرین کیونگا نے کینڈین پریس کو بتایا کہ برفانی تودے موسم بہار کے اختتام یا موسم گرما کے شروع تک رہنے کے بعد ختم ہو جاتے ہیں لیکن اس تودے کے بارے میں لگتا ہے کہ یہ یہاں موجود رہے گا۔

،تصویر کا ذریعہReuters

انھوں نے کہا ہے کہ یہ تودہ بہت ہی بڑا ہے اور فوٹوگرافی کا ایک اچھا موقع فراہم کر رہا ہے۔

اطلاعات کے مطابق اس بار قطب شمالی سے سینکڑوں کی تعداد میں برف کے ٹکڑے اس جگہ سے گزریں گے اور اس وجہ سے ہو سکتا ہے کہ سیاحوں کے حوالے سے ایک مصروف سیزن ہو۔

،تصویر کا ذریعہReuters

Photos from Reuters